.

اردن میں انٹیلی جنس نے دہشت گردی کا خوف ناک منصوبہ ناکام بنا دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اردن میں انٹیلی جنس حکام نے پیر کے روز دہشت گردی کا ایک بڑا اور خوف ناک منصوبہ ناکام بنا دیا۔ یہ منصوبہ داعش تنظیم کے حامی ایک دہشت گرد گروپ نے نومبر 2017 میں تیار کیا تھا۔

اردن کی نیوز ایجنسی پِٹرا کے مطابق گروپ کے عناصر نے اردن میں قومی سلامتی کو سبوتاژ کرنے کے لیے بیک وقت کئی تخریبی کارروائیوں پر عمل درامد کی منصوبہ بندی کی تھی۔

اردن کی انٹیلی جنس کی قبل از وقت کارروائی کے نتیجے میں اس منصوبہ بندی میں ملوث 17 افراد کو گرفتار کر لیا گیا۔ ساتھ ہی وہ ہتھیار اور گولہ بارود بھی برآمد کر لیا گیا جو اس مجرمانہ منصوبے میں استعمال کیا جانا تھا۔

گروپ کے ارکان کے ساتھ تحقیقات میں انکشاف ہوا کہ گروپ نے اپنی کارروائیوں پر عمل کے لیے جامع اور مربوط منصوبہ بندی کی تھی اور مقررہ اہداف کے حوالے سے سروے بھی مکمل کر لیے گئے تھے۔ کارروائیوں میں سکیورٹی ، عسکری اور تجارتی مراکز کے علاوہ میڈیا سینٹروں اور معتدل مزاج مذہبی شخصیات کو نشانہ بنایا جانا تھا۔

گروپ نے دہشت گردی کی کارروائیوں پر عمل درامد کے واسطے مالی رقوم حاصل کرنے کے لیے الرصیفہ اور الزرقاء شہروں میں کئی بینکوں کو لُوٹنے اور متعدد گاڑیوں کو چوری کرنے کی منصوبہ بندی بھی کی تھی۔

تخریب کار گروپ کے تمام ارکان کو استغاثہ کے رُوبرو پیش کیا گیا جہاں اُن کے ساتھ براہ راست تحقیقات کی گئیں۔ تحقیقات مکمل ہونے پر ان افراد کو ریاستی سکیورٹی کی عدالت میں پیش کیا جائے گا۔