.

مصر:دہشت گردی کے نتیجے میں 13 ہزار شہری زخمی ہوئے:السیسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے دعویٰ کیا ہے کہ ملک میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعات کے نتیجے میں کم سے کم 13 ہزار شہری زخمی ہوئے ہیں۔ انہوں نے متعلقہ اداروں کو حکم دیا کہ وہ دہشت گردی کے نتیجے میں زخمی ہونے والے شہریوں کو ہرممکن طبی سہولت فراہم کریں۔

’صدر سے سوال کریں‘ مہم کے دوران صدر عبدالفتاح السیسی نے کہا کہ ہم ماضی کے طور طریقوں کے پابند نہیں۔ مصر نے ہمیشہ ایک آزاد، متوازن اور رواداری پر مبنی پالیسی کو فروغ دینے کی کوشش کی۔ مصر نے عالمی سطح پر اپنا کھویا وقار بحال کیا۔ اس کے اداروں نے اپنا رعب برقراررکھتے ہوئے قوم کی خدمت کو اپنا شعار بنایا۔

صدر السیسی نے انکشاف کیا ہے کہ لیبیا کے کرنل معمر قذافی کے قتل کے بعد ملک کی مغربی سرحد دراندازی روکنے کے لیے ایلیٹ فورس تعینات کی تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم دہشت گردوں کو مصرمیں داخل نہیں ہونے دیں گے۔

صدرالسیسی نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف ان کی حکمت عملی واضح ہے جس کے لیے روزانہ اعلان کی ضرورت نہیں۔

صدر عبدالفتاح السیسی نے کہا کہ سنہ 2011ء کے انقلاب کے بعد تیزی کے ساتھ تبدیل ہونے والے سیاسی حالات نے ریاستی اداروں کو نئے چیلنجز سے دوچار کیا ہے۔ انقلاب کے بعد ریاستی اداروں کا وقار اور ان کا رعب بحال کیا گیا اور ماضی میں حاصل کیے گئے اھداف کا تحفظ کیا گیا۔