.

حوثی ملیشیا کا یتیم خانے پر دھاوا، عالمی امداد کی لوٹ مار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے حوثی شدت پسندوں کی انتقامی کارروائیوں سے ملک میں یتیم بچوں کی کفالت کے مراکز بھی محفوظ نہیں۔ گذشتہ روز مسلح حوثی شرپسندوں نے شمالی یمن کی المحویت گورنری میں ایک یتیم خانے کے مرکز پردھاوا بولا۔ یتیم خانے میں گھس کر توڑپھوڑ کی۔ اس کے خزانے میں موجود تمام رقم لوٹنے کے بعد مرکز کی گاڑیاں بھی قبضے میں لے لیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ’المحویت‘ میڈیا سینٹر کی طرف سے جاری کی گئی ایک فوٹیج میں حوثیوں کو یتیم خانہ پر دھاوے بولتے ، اس کے خزانے سے رقم لوٹتے اور گاڑیوں کو قبضے میں لیتے دیکھا جاسکتا ہے۔

یتیم بچوں کے لیے وظیفہ لینےکے لیے آئے شہریوں اوربیوہ خواتین کو وہاں سے بھگا دیا گیا۔

حوثی شدت پسندوں نےنہ صرف یتیم خانے کی رقم اور گاڑیوں کی لوٹ مار کی بلکہ متاثرین کے لیے عالمی امدادی اداروں کی طرف سے دیا گیا امدادی سامان بھی ان سے چھین لیا گیا۔

عینی شاہدین نے بتایا کہ حوثی ملیشیا نے عالمی ادارہ خوراک کی طرف سے یتیم خانے کو دی گئی خوراک کے 150 تھیلے چھین لیے۔ حوثی باغیوں نے المحویت یتیم طلباءکے ایک ہاسٹل پر بھی دھاوا بولا اور وہاں سے 1500 کمبل،300 بستر اور رقوم لوٹ لی۔

المحویت مرکزکے مطابق حوثی باغیوں نے یہ کارروائی الطویلہ ڈاریکٹوریٹ میں حوثیوں کے مقرر کردہ سیکیورٹی سپر وائزر ابو عبد اللہ اور سمیر المہدی کی نگرانی میں کی۔

خیال رہے کہ ایران نواز حوثی باغیوں کی جانب سے لوٹ مار کا یہ پہلا واقعہ نہیں۔ شہری مراکز، یتیم خانوں حتیٰ کہ مساجد کے فنڈز کی لوٹ مار کا سلسلہ روز کا معمول بن چکا ہے۔ حوثی باغیوں نے حالیہ عرصے کے دوران لوٹ مار کی 16 بڑی کاررائیاں کیں۔انہوں نے 65 بحری جہاز، 124 امدادی قافلے اور امدادی سامان کے 628 ٹرک لوٹ لیے۔