.

حوثیوں کا یمنی طلبہ کو منحرف کرنے کا نیا مکروہ حربہ

باغی ملیشیا نے صنعاء میں تعلیمی سرگرمیاں معطل کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے ایران نواز حوثی شدت پسندوں نے دارالحکومت صنعاء میں ایک ماہ کے لیے تدریسی سرگرمیاں معطل کر دی ہیں۔ اس پابندی کا مقصد مخصوص فرقے کے طلبہ کی تعلیمی مہمات کو فروغ دینا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حوثی ملیشیا کی طرف سے صنعاء میں ایک ماہ کے لیے تعلیمی اور تدریسی سرگرمیوں کو معطل کرنے کا مقصد خاص مسلک کے پیروکار طلبہ کو منظم کرنا اور ان کے حوالے سے جاری مہمات کو موثر انداز میں آگے بڑھانا ہے۔ تعلیمی سرگرمیوں کو معطل کرنے کی آڑ میں طلبہ کے حلقوں میں حوثی نظریات کو فروغ دینا اور طلبہ کو منحرف اور گمراہ کرنے کی کوشش کرنا ہے۔

حوثیوں کی قائم کردہ غیر آئینی وزارت تعلیم نے صنعاء کے تمام اسکولوں کو ایک ماہ کے لیے تعلیمی عمل بند کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔تاہم اسکولوں میں حوثیوں کی حمایت میں پروپیگنڈا مہمات جاری رہیں گی۔ بہ ظاہر حوثیوں کی طرف سے اس پابندی کے لیے یہ جواز تراشا گیا ہے کہ سنہ 2004ء میں یمنی حکومت کے خلاف علم بغاوت بلند کرنے والے حوثی لیڈر کی برسی ہے اور اس حوالے سے صنعاء کے اسکولوں میں خصوصی تقریبات منعقد کی جائیں گی۔

حوثی وزارت تعلیم کی طرف سے اسکولوں کی انتظامیہ کو جاری کردہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ وہ تعلیمی سرگرمیاں معطل کرنے کے بعد مخصوص ثقافتی، ابلاغی اور سپورٹس سرگرمیاں شروع کریں تاکہ طلبہ میں حوثی نظریات کو راسخ کرنے کا موقع مل سکے۔ تمام اسکولوں کو تاکید کی گئی ہے کہ وہ تصاویر اور ویڈیوز کی شکل میں حکومت کو تعلیمی سرگرمیاں معطل کرنے اور حوثیوں کی حمایت میں پروپیگنڈے کے ثبوت کی رپورٹ فراہم کریں۔