.

ایرانیوں کی اکثریت ملکی حالات پر غیر مطمئن ہے : حکومتی سروے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران میں Iranian Students Polling Agency (ISPA) کی جانب ملک میں حالیہ عوامی احتجاج کے بارے میں کرائے گئے سروے کے نتائج کے مطابق 74.8% ایرانی اپنے ملک کے حالات سے ناخوش ہیں۔

سرکاری ادارے کی سروے رپورٹ کے مطابق تقریبا 80% شرکاء کے نزدیک حالیہ عدم اطمینان کا اہم ترین سبب اقتصادی مسائل ہیں۔

سروے میں 31% لوگوں کا کہنا ہے کہ حالیہ مظاہرے ملک کے ناموافق حالات کے سبب خود سے سامنے آئے جب کہ 26.4% سمجھتے ہیں کہ عوام بیرونی سازش کے تحت سڑکوں پر نکلے۔ اس کے مقابل 23.7% کی رائے میں ان مجمعوں کو اندرونی قوتوں نے منظم کیا۔

ایرانی مرکز ISPA کے سربراہ محمد اقاسی کے مطابق 41% شرکاء کا کہنا ہے کہ وہ آئندہ ہونے والے کسی بھی احتجاج میں سڑکوں پر نکلیں گے بشرط یہ کہ مظاہرے پر امن اور قانون کے دائرہ کار میں ہوں۔ اس کے مقابل 48% نے کہا کہ وہ کسی احتجاج میں ہر گز شریک نہیں ہوں گے۔

غیر جانب دار اور بین الاقوامی اداروں نے مذکورہ سروے کی درستی کے حوالے سے شکوک کا اظہار کیا ہے اس لیے کہ ان کے نزدیک ایران میں کڑی حکومتی نگرانی کے سبب کسی آزادانہ سروے کے انعقاد کا موقع میسر نہیں ہے۔

یاد رہے کہ ایران میں 28 دسمبر سے شروع ہو کر تقریبا دو ہفتے تک جاری رہنے والے عوامی احتجاج کے دوران سکیورٹی فورسز کی فائرنگ سے 25 مظاہرین ہلاک ہو گئے جب 11 گرفتار شدگان جیل میں تشدد کے سبب جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ حکام نے ملک کے مختلف علاقوں میں 100 سے زیادہ شہروں میں ہونے والے احتجاج کے دوران 5000 کے قریب افراد کو گرفتار کیا۔

ایرانی سرگرم حلقوں کی جانب سے سوشل میڈیا پر مطالبہ کیا گیا ہے کہ آئندہ اتوار کے روز 40 واں یومِ انقلاب منانے کے موقع پر ایرانی نظام کے خلاف مظاہرے کیے جائیں۔