.

’صہیونی لابی‘ سے متعلق فلم نشر نہ کرانے کی قطری یقین دہانی

اسرائیلی اخبار نے قطرکی امریکی لابی سے قربت کا بھانڈہ پھوڑدیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حال ہی میں قطر کے دورے پر آئے امریکی یہودیوں کے اعلیٰ سطحی وفد کو دوحہ حکام نے یقین دلایا ہے کہ ’الجزیرہ‘ نیوز چینل کی تیارکردہ یہودی لابی سے متعلق فلم ’واشنگٹن‘ میں نشر کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

اسرائیل کے کثیرالاشاعت عبرانی اخبار ’ہارٹز‘ نے امریکی دارالحکومت واشنگٹن میں اسرائیلی حلقوں کے پانچ ذمہ دار ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ قطر کی طرف سے پچھلے سال دوحہ کا دورہ کرنے والے امریکی یہودیوں کے وفد کو یقین دلایا گیا کہ دوحا یہودی لابی سے متعلق 'متنازع' دستاویزی فلم امریکا نہیں دکھائے گا۔

دوحا کے امریکی یہودیوں سے کیے گئے اس وعدے کا اصل محرک عالمی یہودی لابی میں قطر کی ساکھ بہتر بنانا بالخصوص چارعرب ملکوں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مصر کی طرف سے سفارتی وتجارتی بائیکاٹ کے بعد قطر نے امریکا میں عوامی سطح پر اپنے تعلقات کو مستحکم کرنے کے لیے مختلف اقدامات کیے۔ ان میں ایک اقدام امریکا میں موجود یہودی لابی کو خوش کرنا بھی شامل تھا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ قطر کے تین عہدیداروں نے یقین دلایا تھا کہ حکومت مذکورہ دستاویزی فلم نہیں دکھائے گی تاہم ایک ہفتہ قبل امریکا میں اسرائیل نواز تنظیموں نے دعویٰ کیا کہ انہیں ’الجزیرہ‘ ٹی وی کے عہدیداروں کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ وہ یہودی لابی سے متعلق ڈاکومنٹری دکھائیں گے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکی یہودی گروپوں کو 'الجزیرہ' کے حکام کے بیانات سے سخت مایوسی ہوئی ہے۔ ان کا کہنا ہےکہ دوحا کی یقین دہانی کے باوجود متنازع فلم دکھانے سے کئی طرح کے سوالات نے جنم لیا ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ قطر نے اپنی پالیسی تبدیل کرلی ہے۔