.

شام میں آگ سے نہ کھیلیں : لاؤروف کا امریکا کو انتباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے شام کی تقسیم کی کوششوں سے خبردار کرتے ہوئے امریکا سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ آگ سے ہر گز نہ کھیلے۔ ان کا اشارہ دریائے فرات کے مشرق میں کرد یونٹوں اور گرپوں کے لیے واشنگٹن کی سپورٹ کی جانب تھا۔

ماسکو میں ایک بین الاقوامی ڈائیلاگ فورم کے سیشن میں لاؤروف کا کہنا تھا کہ "میں اپنے امریکی ساتھیوں سے ایک بار پھر مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ آگ سے کھیلنے سے گریز کریں۔ روس کو شام کی تقسیم کی کوششوں کے حوالے سے تشویش لاحق ہے۔ اس کی وجہ امریکا کی جانب سے شام کی سرزمین پر بالخصوص دریائے فرات کے مشرق میں شروع کیے جانے والے منصوبے ہیں"۔

لاؤروف کے مطابق واشنگٹن کی یہ یقین دہانی کہ اس کا واحد مقصد دہشت گردی کےخلاف جنگ ہے، یہ زمین پر اس کے تصرفات کے متضاد ہے۔ انہوں نے امریکا پر زور دیا کہ وہ نمایاں افعال کے ذریعے اپنے دعوؤں کو ثابت کرے۔

جہاں تک شام میں روس کی ہلاکتوں کا تعلق ہے تو اس بابت روسی نیوز ایجنسی نے لاؤروف کے حوالے سے بتایا ہے کہ شام میں سیکڑوں روسیوں کی ہلاکت سے متعلق حال ہی میں سامنے آنے والی رپورٹیں محض شام کی جنگ سے فائدہ اٹھانے کی ایک کوشش ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ ہفتے تین باخبر ذرائع نے برطانوی خبر رساں ایجنسی کو بتایا تھا کہ شام میں ایک نجی روسی عسکری کمپنی کے لیے کام کرنے والے 300 افراد رواں ماہ ایک واقعے میں ہلاک و زخمی ہو گئے۔