.

سعودی عرب اور مصر کا سیناء میں بڑے شہری منصوبے کے لیے اراضی کی ترقی سے اتفاق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب اور مصر کے درمیان جزیرہ نما سیناء کے جنوب میں نیوم شہر کے مجوزہ منصوبے کے حصے کے طور پر ایک ہزار مربع کلومیٹر سے زیادہ اراضی کی تعمیر وترقی کے لیے سرمایہ کاری کا ایک معاہدہ طے پایا ہے۔

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورے کے موقع پر طے پائے اس معاہدے کے تحت دونوں ممالک 10 ارب ڈالرز سے زیادہ مالیت کا ایک مشترکہ فنڈ قائم کریں گے اور اس میں دونوں ممالک کے حصص مساوی ہوں گے لیکن مصر اپنے حصے کے طور پر ایک طویل مدت کے لیے اپنی اراضی کو پٹے ( لیز) پر دے گا اور سعودی عرب نقد رقوم مہیا کرے گا۔

دونوں ممالک نے سمندری ماحول کے تحفظ سے متعلق ایک پروٹوکول پر بھی دستخط کیے ہیں۔اس کا مقصد ساحل سمندر اور بیچز کو آلودہ ہونے سے بچانا ہے۔یہ تمام سمجھوتے بحیرہ احمر کے منصوبوں پر کام شروع کرنے سے قبل حکمت ِعملی کا حصہ ہیں اور ان کا مقصد نیوم کے لیے ایک محفوظ ماحول مہیا کرنا ہے۔

سعودی عرب ، مصر اور اردن سیاحت کے فروغ کے لیے اپنے سنگم پر واقع علاقے کو ترقی دیں گے۔سعودی عرب اس علاقے میں نیوم کے بڑے منصوبے کے علاوہ سات ساحلی سیاحتی مقامات کی بھی تعمیر کرے گا۔وہ بحیرہ احمر کے کنارے پچاس ریزارٹس کی تعمیر اور چار چھوٹے شہروں کے منصوبوں پر بھی کام کررہا ہے ۔

سعودی عرب نیوم اور بحیرہ احمر کے سیاحتی منصوبے کے درمیان واقع علاقوں کی ترقی کے لیے بھی کام کررہا ہے۔وہ تین اور سیاحتی سیر گاہیں بنائے گا اور مصر سیناء میں واقع سیاحتی مقام شرم الشیخ اور الغردقہ شہر کو سیاحوں کے لیے پُرکشش مقام بنانے کی غرض سے ترقیاتی کام کرے گا اور اردن تاریخی مقام عقبہ کو ترقی دے گا۔

سعودی عرب اس وقت یورپ سے تعلق رکھنے والی سات ٹورسٹ کمپنیوں سے بھی بحیرہ احمر میں سیاحتی جہاز رانی کی بہتری اور فروغ کے لیے بات چیت کررہا ہے تاکہ موسم گرما میں بھی سیاحتی جہازرانی کو پُرکشش بنایا جاسکے اور زیادہ سے زیادہ سیاحوں کو راغب کیا جاسکے۔