فلسطینی وزیراعظم کے قافلے کے نزدیک دھماکا کیسے ہوا؟ دیکھئے!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک فلسطینی سکیورٹی ذریعے نے منگل کے روز بتایا ہے کہ غزہ پٹی کا دورہ کرنے والے فلسطینی وزیراعظم رامی الحمد اللہ اور فلسطینی انٹیلی جنس کے سربراہ ماجد فرج کے قافلے کے نزدیک ایک دھماکا ہوا ہے۔ دھماکے کے نتیجے میں سات افراد زخمی ہو گئے تاہم فلسطینی وزیراعظم اور انٹیلی جنس چیف محفوظ رہے۔ واقعے میں وزیراعظم کے قافلے میں شامل تین گاڑیوں کو نقصان پہنچا۔ گاڑیوں کے شیشے ٹوٹ گئے جب کہ ایک دروازے پر خون کے چھینٹے بھی آئے۔

رامی الحمد اللہ نکاسیِ آب کے ایک اسٹیشن کے افتتاح کے لیے غزہ پٹی پہنچے تھے۔ اس منصوبے کے لیے 7.5 کروڑ ڈالر کی مطلوبہ فنڈنگ بین الاقوامی بینک، یورپی یونین اور یورپی حکومتوں کی طرف سے کی گئی۔

دوسری جانب فلسطینی صدارتی اتھارٹی نے فلسطینی وزیراعظم اور انٹیلی جنس چیف کے قافلے کو نشانہ بنائے جانے کی سخت مذمت کرتے ہوئے واقعے کا ذمّے دار حماس تنظیم کو ٹھہرایا ہے۔

ادھر حماس تنظیم نے اپنے ایک بیان میں رامی الحمد اللہ کے قافلے کو نشانہ بنائے جانے کی مذمت کی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ مجرمانہ کارروائی غزہ پٹی کے امن و امان کو خراب کرنے کی کوششوں کا حصّہ ہے جس کا مقصد مصالحت اور یک جہتی کی کوششوں پر ضرب لگانا ہے۔ حماس نے سکیورٹی اداروں اور وزارت داخلہ سے مطالبہ کیا ہے کہ اس مجرمانہ کارروائی کی فوری تحقیققات کی جائیں اور اس کے مرتکب عناصر کو قانون کے کٹہرے میں پیش کیا جائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں