.

اسرائیلی وزیراعظم کی فلسطینی نوجوان کا گھر گرانے کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو کا کہنا ہے کہ ان کی حکومت مغربی کنارے کے شمالی قصبے برطعہ میں فلسطینی نوجوان علاء کبہا کے گھر کو منہدم کر دے گی۔ علاء پر جنین شہر کے نزدیک اسرائیلی فوجیوں کو گاڑی سے کچل دینے کا الزام ہے۔ واقعے میں دو اسرائیلی فوجی ہلاک اور کئی زخمی ہو گئے تھے۔

دوسری جانب علاء کبہا کے گھر والوں نے العربیہ نیوز کو بتایا ہے کہ جو کچھ ہوا وہ ایک ٹریفک حادثہ تھا اور اس جگہ پر پہلے بھی کئی جان لیوا حادثات ہو چکے ہیں۔

علاء کے خاندان نے اپنے بیٹے پر عائد اُن اسرائیلی الزامات کو یکسر مسترد کر دیا جن میں دعوی کیا گیا ہے کہ علاء نے جان بوجھ کر اسرائیلی فوجیوں کا گاڑی سے کُچلا۔

علاء کی بہن نسرین جو ایک فارمیسی چلاتی ہے اُس نے بتایا کہ حادثے کے روز اُسی نے علاء کو اپنے ایک اور بھائی عصام کو پہنچانے کے لیے گاڑی دے کر بھیجا تھا۔

علاء کے والد جو قصبے میں ایک حجامت کی دکان چلاتے ہیں اُن کا کہنا ہے کہ علاء محض سیاست کا شکار ہو گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ "میں علاء کے لیے ایک گھر بنانے والا ہوں اور اس کی شادی کرنا چاہتا ہوں۔ میں اپنے بیٹے عصام کو روزانہ پہنچانے جاتا ہوں مگر اُس روز میں نماز ادا کر رہا تھا اس لیے علاء اُسے پہنچانے چلا گیا۔ میرے بیٹے کا کسی گروپ سے تعلق نہیں ہے"۔

علاء کبہا کے اہل خانہ نے باور کرایا ہے کہ ان کے بیٹے کے ساتھ جو کچھ ہوا وہ ایک اتفاقی حادثے کے سوا اور کچھ نہیں۔