برطانوی جاسوس کو زہردینے کا الزام مضحکہ خیز ہے:پوتین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس کے نو منتخب صدر ولادی میر پوتین نے اتوار کے روز دوبارہ ملک کا صدر منتخب ہونے کے بعد پہلی پریس کانفرنس میں برطانوی جاسوس اوران کی بیٹی کو زہر دیے جانے کے الزام کو مسترد کردیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق روس کے چوتھی بار صدر منتخب ہونے والے ولادی میر پوتین کا کہنا تھا کہ میرے خیال میں سابق برطانوی جاسوس سیرگی سکریپل اوراس کی بیٹی کو زہر دیے جانے کا دعویٰ بے بنیاد اور من گھڑت ہے۔ خیال رہے کہ سیرگی اور اس کی بیٹی دونوں اس وقت برطانیہ کےایک اسپتال میں زندگی اور موت کی کشمکش میں ہیں۔

صدر پوتین نے کہا کہ میراخیال ہے کہ روس میں صدارتی انتخابات اور فٹ بال ورلڈ کپ سے قبل ایسے کسی اقدام کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ ماسکو پر سابق برطانوی ایجنٹ کو زہر دینے کا الزام بے بنیاد ہے۔

ایک سوال کے جواب میں روسی صدر نے کہا کہ جس اعصابی گیس کا ذکر برطانیہ کی طرف سے کیا جا رہا ہے ماسکو کے پاس وہ گیس موجود ہی نہیں۔ اگر یہ گیس استعمال کی گئی ہوتی تو اس سے صرف ایک یا دو افراد نہیں بلکہ اور بہت سے افراد بھی متاثر ہوتے۔

اس موقع پر صحافیوں نے پوچھا کہ آیا وہ سنہ 2024ء میں بھی روس کے صدر کے امیدوار بنیں گے تو ولادی میر پوتین نے ہنس کر کہا یہ یہ سوال کس قدر مضحکہ خیز ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھے گنتی کرنے دیں۔ کیا میں اس وقت بھی روس کا صدر ہوں گا جب میری عمرسو سال سے بڑھ جائے گی۔

پوتین نے اپنے وٹروں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے انہیں ایک چوتھی بار روس کے سیاہ و سفید کا مالک بنا دیا۔ ڈائس چھوڑنے سے پہلے پوتین نے وہاں پر مجمع کے ساتھ مل کر ’روس، روس‘ کے نعرے لگائے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں