.

دہشت گردی سے متعلق قطر کی پالیسی عرب دنیا کے متفقہ موقف کے موافق نہیں: مصر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے وزیر خارجہ سامح شکری نے باور کرایا ہے کہ انسداد دہشت گردی کے حوالے سے قطر کی پالیسی عرب دنیا کے اجتماعی موقف سے مطابقت نہیں رکھتی۔

اتوار کے روز اردن کے وزیر خارجہ ایمن الصفدی کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں شکری کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنے اردنی ہم منصب کے ساتھ غزہ کے حالیہ افسوس ناک واقعات پر بات چیت کی۔ شکری کا مزید کہنا تھا کہ "ہم فلسطینیوں کے تمام قانونی حقوق کے حصول کے موقف کا دفاع کرتے ہیں"۔ مصری وزیر خارجہ کے مطابق انسانی حقوق کی بین الاقوامی کونسل پر لازم ہے کہ فلسطینی عوام کے حوالے سے اپنی پالیسی کا جائزہ لے۔

دوسری جانب اردن کے وزیر خارجہ نے کہا کہ "ہم فلسطینیوں کے خلاف تشدد کی کارروائیوں کو مسترد کرتے ہوئے ان کے حقوق کا مطالبہ کرتے ہیں"۔ ایمن الصفدی نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ اپنے حقوق کا مطالبہ کرنے والے فلسطینیوں کو تحفظ فراہم کرے۔ انہوں نے کہا کہ سعودی عرب میں ہونے والا عرب لیگ کا آئندہ اجلاس بہت اہمیت کا حامل ہو گا۔

اردنی وزیر خارجہ کے مطابق "دو ریاستی حل فلسطین اور اسرائیل کے درمیان بحران کا واحد حل ہے اور بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کیے جانے کے کسی بھی اعلان کو مسترد کرتے ہیں"۔

دہشت گردی کے خلاف جنگ کے سلسلے میں ایمن الصفدی نے کہا کہ "ہم انسداد دہشت گردی کی کوششوں میں مصر کے ساتھ کھڑے ہیں"۔

شام میں جنگ کے حوالے اردنی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ "ہم غوطہ کے شہریوں کو درپیش انسانی آفت کی مذمت کرتے ہیں اور ساتھ ہی شام میں جامع فائر بندی کا مطالبہ بھی کرتے ہیں"۔

اردن کے وزیر نے باور کرایا کہ عمّان حکومت اپنے ملک میں موجود ہزاروں شامیوں کی ذمّے داری اٹھانے کا سلسلہ جاری رکھے گا۔