.

اسرائیلی فوج کی شیلنگ سے غزہ کی سرحد پردرجنوں مظاہرین زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی کی مشرقی سرحد پر جمع ہزاروں افراد نے آج دوسرے جمعہ کو بھی ’حق واپسی‘ کے لیے احتجاجی مظاہرے جاری رکھے ہوئے ہیں۔ دوسری جانب فلسطینی حکام کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج نے مظاہرین پر فائرنگ اور آنسوگیس کی شیلنگ کی ہے جس کے نتیجے میں کم سے کم 40 افراد زخمی ہوئے ہیں، جن میں سے پانچ کی حالت خطرے میں بیان کی جاتی ہے۔

خبر رساں اداروں کے مطابق جمعہ کے روز مشرقی غزہ میں سیکڑوں فلسطینی سرحدی باڑ قریب جمع ہوئے اور اسرائیل کے خلاف نعرے لگانے لگے۔ انہوں نے گاڑیوں کے ٹائر جلائے اور اسرائیلی فوج کی طرف پتھر پھینکے۔

اسرائیلی فوج نے فلسطینی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ان پر لاٹھی چارج کیا اور آنسوگیس کی شیلنگ کی۔

خیال رہے کہ گذشتہ جمعہ کو غزہ کی مشرقی سرحد پر جمع ہونے والے ہزاروں فلسطینیوں پر اسرائیلی فوج نے براہ راست گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں 18 فلسطینی شہید اور سیکڑوں زخمی ہو گئے تھے۔

دوسری جانب اسرائیلی فوج نے غزہ کی سرحد پر سیکیورٹی کے سخت ترین انتظامات کیے ہیں۔

امریکی حکومت نے بھی آج جمعہ کو غزہ کی سرحد پر فلسطینیوں کے احتجاجی مظاہروں کے دوران ممکنہ تشدد پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ وائٹ ہاؤس نے فلسطینی مظاہرین پر زور دیا ہے کہ وہ سرحد سے پانچ سو میٹر دور رہ کر پرامن احتجاج کریں۔