شام میں قتل عام، روسی اجرتی قاتل اور فضائی کمپنی بھی ملوث

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام میں انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کا الزام نہ صرف صدر بشارالاسد کی وفادار فوج پر عاید کیاجا رہا ہے بلکہ نہتے شہریوں کے قتل عام میں اجرتی قاتل اور بعض فضائی کمپنیاں بھی شامل ہیں۔

الحدث نیوز چینل کی رپورٹ کےمطابق بشارالاسد کے حلیف نیٹ ورک کی جانب سے اسدی فوج کو لاجسٹک امداد مہیا کی جا رہی ہے۔ رپورٹ کے مطابق دمشق اور اللاذقیہ شہر میں قائم روسٹوف روسی فوجی اڈے کو فضائی پل کی شکل میں باہم ملایا گیا ہے۔ روسٹوف ہوائی اڈے پر روس کے ہزاروں ریٹائرفوجی پہنچ رہے ہیں جہاں سے وہ مقامی فضائی کمپنی کے ذریعے دمشق پہنچتے ہیں۔

شام ایوی ایشن ونگ فضائی کمپنی کو سنہ 2016ء میں امریکا نے بلیک لسٹ کردیا تھا اس کے باوجود یہ کمپنی روس سے شام تک ہفتہ وار اپنی پروازیں چلا رہی ہے۔ اس کمپنی کی پروازیں خفیہ ہوتی ہیں جن میں روس سے جنگجوؤں اور اجرتی قاتلوں کو اللاذقیہ اور دمشق لایا جاتا ہے۔

خبر رساں اداروں کی رپورٹس کے مطابق روس اپنی باضابطہ فوج کے بجائے اجرتی قاتلوں کو شام کے محاذ پر جھونک رہا ہے۔ شاید اس کی وجہ یہ بھی ہے کہ چیچنیا اور افغانستان میں روسی فوج کو ہونے والا جانی نقصان آج بھی بھلایا نہیں جاسکا ہے۔ شام میں مرنے والے روسی اجرتی قاتلوں کی وجہ سے صدر پیوتن زیادہ پریشان نہیں کیونکہ سرکاری فوجیوں کی ہلاکتوں کے برعکس یہ معاملہ اتناحساس نہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں