.

شام پر ممکنہ حملہ، امریکا نے فوج اور اسلحہ بحر روم پہنچا دیا

شام میں جنگ کو ٹالنے کی کوشش کر رہے ہیں: روس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں دوما کے مقام پر مبینہ کیمیائی حملے کے بعد امریکا اور اس کے اتحادیوں نے اسد رجیم کو سبق سکھانے تیاریاں تیز کر دی ہیں۔ اطلاعات کے مطابق پینٹا گون نے شام پر حملے کے لیے بحری کمک جمع کرنا شروع کر دی ہے۔

دوسری جانب روس نے کشیدگی کم کرنے کے لیے سفارتی کوششیں بھی تیز کر دی ہیں۔

سلامتی کونسل کے بند کمرہ اجلاس میں شام کے تنازع پر خصوصی غور خوض کیا گیا۔ اقوام متحدہ میں روس کے سفیر فاسیلی نینزیا نے کہا ہے کہ ان کے ملک کی پہلی ترجیح جنگ کا خطرہ ٹالنا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں روسی سفیر نے کہا کہ امریکا اور روس کے درمیان جنگ خارج از امکان نہیں تاہم ان کا ملک جنگ کو ٹالنے کے لیے مختلف پہلوؤں پر کام کر رہا ہے۔

نیویارک میں اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کے بند کمرہ اجلاس میں شرکت کے بعد وسیلی نیبنزیا نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے ہم کسی بھی امکان کو رد نہیں کر سکتے۔

وائٹ ہاوس کا کہنا ہے کہ وہ اپنے اتحادیوں سے بات چیت جاری رکھے ہوئے ہیں اور اس ’کیمیائی حملے‘ کے ردِعمل پر غور کر رہے ہیں۔

ادھر برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے کے دفتر ٹین ڈاؤننگ سٹریٹ نے ایک بیان میں کہا ہے کابینہ کے وزیروں نے ’کیمیائی ہتھیاروں کے مزید استعمال کو روکنے کے لیے شام میں کارروائی کرنے کی ضرورت‘ پر اتفاق کیا ہے۔

برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے جمعرات کی رات گئے امریکی صدر سے بات کی اور اس بات سے اتفاق کیا ہے شام کے معاملے پر مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

اس سے قبل فرانس کے صدرعمانویل ماکروں نے جمعرات کو کہا کہ فرانس کے پاس شواہد ہیں کہ شام کے شہر دوما میں گذشتہ ہفتے کیمیائی ہتھیار یا کم از کم کلورین کا استعمال کیا گیا ہے اور یہ ہتھیار بشار الاسد کی حکومت نے استعمال کیے ہیں۔

مقامی ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے فرانسیسی صدر نے کہا کہ شام میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے جواب میں ہونے والی فوجی کارروائی میں ترجیحات پر توجہ دیں گے اور خطے کے استحکام کو برقرار رکھیں گے۔

برطانوی ریڈیو کی رپورٹ کے مطابق امریکی جنگی بیڑا’یو ایس ایس ڈونلڈ کوک‘ بحر روم میں پہنچ چکا ہے۔ اس پر ’ٹوماھوک‘ طرز کے 60 میزائل نصب ہیں۔ اس کے علاوہ تین اور بحری بیڑے بھی بحرروم کی جانب روانہ کردیے گئے ہیں۔’یو ایس ایس ہیر ایس ٹرومن‘ روجینیا سے بحروم کی طرف بدھ کو روانہ کر دیا گیا تھا۔