شامی اپوزیشن نے امریکا اور اتحادیوں سے بشار الاسد کے خلاف "ڈو مور" کا مطالبہ کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شامی اپوزیشن کی سپریم مذاکراتی کمیٹی کے سربراہ نصر الحریری نے مطالبہ کیا ہے کہ شامی حکومت کی جانب سے شہریوں کے خلاف کیمیائی یا روایتی ہر طرح کے حملوں کو روکا جانا چاہیے۔

ہفتے کے روز اپنی ٹوئیٹ میں الحریری کا مزید کہنا تھا کہ "بیرل بموں، کلسٹر بموں اور دیگر روایتی ہتھیاروں کا نشانہ بننے والے شامیوں کی تعداد کیمیائی ہتھیاروں سے متاثر ہونے والوں سے کئی گُنا زیادہ ہے"۔

الحریری کے مطابق ہو سکتا ہے کہ شامی حکومت کیمیائی ہتھیاروں (سیرین گیس) کا استعمال دوبارہ نہیں کرے مگر وہ عالمی برادری کی جانب سے غیر ممنوعہ ہتھیاروں کے بے دریغ استعمال میں ہر گز نہیں ہچکچائے گی۔ ان میں بیرل بم، کلسٹر بم ، وِنگڈ میزائل اور قلیل مقدار میں کلورین شامل ہے۔

شام میں انسانی حقوق کے نگراں گروپ المرصد کے مطابق ادھر امریکا، فرانس اور برطانیہ کے حملوں میں شامی دارالحکومت دمشق اور اس کے اطراف عسکری اڈوں اور ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کے مطابق دمشق میں زوردار دھماکے سنے گئے۔

امریکی صدر نے وہائٹ ہاؤس سے اعلان کیا تھا کہ شام میں فرانس اور برطانیہ کے ساتھ مل کر مشترکہ فوجی آپریشن جاری ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ "کارروائی مطلوبہ وقت تک جاری رہے گی"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں