مغربی ممالک کے حملوں میں ہمارے اڈوں کے قریب ٹھکانوں کو نشانہ نہیں بنایا گیا : روس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس کی وزارت دفاع نے ہفتے کے روز اعلان میں کہا ہے کہ مغربی ممالک کے حملوں میں شام میں روس کے فضائی اور بحری اڈّوں کے نزدیک واقع ٹھکانوں کو نشانہ نہیں بنایا گیا۔

روسی خبر رساں ایجنسی "نوویسٹا" کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکا اور اس کے حلیفوں کی جانب سے داغا جانے والا کوئی بھی میزائل طرطوس اور حمیمیم کی تنصیبات کے علاقے میں داخل نہیں ہوا۔

وزارت دفاع نے زور دیا ہے کہ روس نے شامی حکومت کی تنصیبات پر مغربی ممالک کے حملوں کو روکنے کے لیے شام میں اپنے فضائی دفاعی نظام کا استعمال نہیں کیا۔

روسی وزارت دفاع نے باور کرایا کہ امریکا اور اس کے حلیفوں نے شام میں مختلف اہداف پر 100 سے زیادہ میزائل داغے جن میں ایک بڑی تعداد کو شامی حکومت کی فورسز نے فضا میں ناکارہ بنا دیا۔

اس سلسلے میں "انٹرفیکس" نیوز ایجنسی نے روسی وزارت دفاع کے حوالے سے یہ بھی بتایا ہے کہ بشار کی فورسز نے ان حملوں کو روسی ساختہ ہتھیاروں کا استعمال کرتے ہوئے ناکام بنایا۔ ان میں Buk missile system شامل ہے۔

ادھر خارجہ امور کی روسی کمیٹی کے سربراہ کا کہنا ہے کہ "غالب گمان ہے کہ شام پر حالیہ حملے درحقیقت کیمیائی اسلحے پر پابندی کی تنظیم کے کام کو روکنے یا اس میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش ہے جو دوما میں اپنا مشن شروع کر رہی ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں