.

مشہور یہودی اداکارہ نے اسرائیل کو چراغ پا کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی اور اسرائیلی شہریت کی حامل مشہور اداکارہ نتالی پورٹمین نے اسرائیل میں اپنے اعزاز میں منعقد ہونے والی تقریب کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا ہے۔اس میں آسکر ایوارڈ یافتہ اس اداکارہ کو دس لاکھ ڈالرز کا انعام دیا جانا تھا۔ نتالی کے مطابق وہ خود کو اسرائیلی وزیراعظم کی سپورٹر کے روپ میں پیش نہیں کرنا چاہتی ہیں کیوں کہ تقریب میں بنیامین نیتن یاہو نے بھی تقریر کرنا تھی۔

اسرائیل میں جینیسس پرائز ایوارڈ کی تقریب کے منتظمین کا کہنا ہے کہ 37 سالہ اداکارہ حالیہ دنوں میں غزہ اسرائیل سرحد پر ہونے والے خون ریز واقعات کے سبب ذہنی طور پر شدید پریشان ہیں اور وہ خود کو کسی بھی تقریب میں شرکت کے لیے تیار نہیں کر پا رہی ہیں۔ نتالی کا موقف سامنے آنے کے بعد منتظمین نے تقریب کو منسوخ کر دیا ہے۔ منتظم گروپ نے باور کرایا ہے کہ اسے اداکارہ کے انسانی احساس سے متعلق جذبات پسند آئے اور وہ اسرائیلی حکومت کی پالیسیوں سے علانیہ اختلاف سے متعلق نتالی کے حق کا احترام کرتا ہے۔

دوسری جانب اسرائیل کی وزیر ثقافت میری ریگیو کا کہنا ہے کہ نتالی پورٹمین بائیکاٹ کی تحریک، سرمایہ کاری نکالے جانے اور پابندیاں عائد کیے جانے کی تحریک کو سپورٹ کر رہی ہیں جس کا مقصد فلسطینیوں کے ساتھ برتاؤ کے سبب اسرائیل کو اقتصادی طور پر تنہا کر دینا ہے۔ ریگیو کے مطابق یہ افسوس ناک امر ہے کہ اسرائیل میں پیدا ہونے والی ایک یہودی خاتون ان لوگوں کے ساتھ شامل ہو گئی ہے جو اسرائیل کی کامیابی کی کہانی کو ظلم اور تاریکی کا نام دیتے ہیں۔

نتالی پورٹمین بیت المقدس میں پیدا ہوئیں اور تین سال کی عمر میں امریکا منتقل ہو گئی تھیں۔

دوسری جانب اسرائیلی اخبار ہآرٹز کے مطابق نتالی پورٹمین نے ان واقعات کا تعین نہیں کیا جو ان کے لیے پریشانی اور تقریب میں شرکت سے انکار کا سبب بنے۔

اسرائیل کو گذشتہ ہفتوں کے دوران غزہ پٹی کے ساتھ سرحد پر پُر امن فلسطینی مظاہرین کے خلاف کریک ڈاؤن میں خون ریزی کا طریقہ استعمال کرنے پر بین الاقوامی سطح پر تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔ فلسطینی احتجاج کا سلسلہ شروع ہونے کے بعد سے 34 فلسطینی شہید اور سیکڑوں زخمی ہو گئے۔