ملائشیا میں قتل فلسطینی پروفیسر کی میت کی غزہ واپسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ملائشیا کے دارالحکومت کوالالمپور میں گذشتہ ہفتے کی صبح قتل ہونے والے فلسطینی سائنس دان فادی البطش کی میت جمعرات کو ان کے آبائی علاقے غزہ پٹی میں پہنچا دی گئی ہے۔

پروفیسر فادی البطش کوالالمپور میں ایک جامعہ میں پڑھاتے تھے ۔وہ حماس کے رکن تھے ۔ ملائشین پولیس کے مطابق موٹر بائیک پر سوار دو حملہ آوروں نے 35 سالہ پروفیسر بطش کو 14 گو لیاں مار کر قتل کردیا تھا۔اس وقت وہ کوالالمپور کے ایک نواحی علاقے میں نماز فجر کی ادائی کے لیے جارہے تھے۔ کلوز سرکٹ ٹی وی کی فوٹیج کے مطابق دونوں مشتبہ قاتلوں نے جائے واردات پر پروفیسر بطش کا 20 منٹ تک انتظار کیا تھا۔

ان کے خاندان اور دوستوں نے اسرائیل کی بدنام زمانہ خفیہ ایجنسی موساد پر انھیں قتل کرانے کا الزام عاید کیا ہے۔غزہ کی حکمراں حماس نے بھی اسرائیل پر کوالالمپور میں پروفیسر فادی البطش کے قتل کا الزام عاید کیا ہے لیکن صہیونی ریاست نے اس الزام کی تردید کی ہے۔

ان کی میت مصر سے سرحدی گذرگاہ رفح کے ذریعے غزہ کی پٹی میں ان کے آبائی قصبے جبالیہ میں تدفین کے لیے لے جائی گئی ہے۔

ملائشیا کی پولیس نے اگلے روز مقتول پروفیسر کے دونوں مشتبہ قاتلوں کی تصاویر جاری کردی ہیں ۔اس کا کہنا ہے کہ وہ دونوں بظاہر شکل وشباہت سے یورپی یا مشرق اوسط سے تعلق رکھتے ہیں جس کے بعد اس شُبے کو تقویت ملی ہے کہ قتل کی اس واردات کے پیچھے اسرائیلی خفیہ ایجنسی موساد کا ہاتھ کارفرما ہے۔

پروفیسر فادی البطش  کے ایک مبینہ  قاتل کی  تصویر اور خاکا ۔
پروفیسر فادی البطش کے ایک مبینہ قاتل کی تصویر اور خاکا ۔
مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں