.

عراقی ووٹر بدعنوان سیاستدانوں کی اقتدار میں واپسی کا راستہ روکیں: السیستانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے سرکردہ شیعہ مذہبی رہنما آیت اللہ علی السیستانی نے عراقیوں پر زور دیا ہے کہ مئی کے دوسرے ہفتے میں ہونے والے عام انتخابات میں سابقہ حکومت میں شامل بدعنوان عناصر کو ووٹ دینے سے گریز کریں تاکہ وہ ملک کے اقتدار پر دوبارہ قابض نہ ہو سکیں۔ اس امر کا اظہار انھوں نے جمعہ کے روز ایک غیر معمولی بیان دیتے ہوئے کیا۔

آیت اللہ السیستانی کے ترجمان عبدالمھدی الکربلائی نے عراقی کے جنوبی شہر کربلا میں خطبہ جمعہ دیتے ہوئے ایک بیان دیا ہے جس میں عراقی ووٹروں پر زور دیا گیا ہے کہ وہ حق رائے دہی استعمال کرنے سے پہلے امیدواروں اور سربراہاں لسٹ کی پیشہ وارانہ اہلیت کی مکمل جانچ کریں۔ خاص طور 12 مئی کو قسمت دوبارہ قسمت آزمانے والے ان امیدواروں کی کڑی جانچ ضروری ہے جو سابقہ حکومت میں شامل تھے اور ان کے اقدامات سے ملک تباہی کے دہانے پر آ کھڑا ہوا۔

انھوں نے انتخابی عمل کے حوالے سے اپنی غیر جانبداری کا ثبوت دیتے ہوئے باور کرایا کہ وہ 12 مئی کے انتخاب میں مکمل طور پر لاتعلق ہے۔ ان کا کوئی پسندیدہ امیدوار یا انتخابی لسٹ نہیں ہے۔

گذشتہ سات دنوں سے عراقی سیاست میں السیستانی کے تازہ بیان کی تشریح کا کیا جا رہا تھا جس میں انھوں نے کہا تھا کہ “آزمائے ہوئے کو آزمانا احمقوں کا کام ہے”۔ اس بیان کا مقصد ووٹروں کو اس بات سے خبردار کرنا تھا کہ ایسے امیدواروں سے خبردار رہا جائے کہ جنہیں بیرون ملک سے سیاسی اور مالیاتی حمایت مل رہی ہے، یا وہ غیر ملکی میڈیا کی لہروں پر اپنی مہم چلا رہے ہیں۔ نیز ایسے امیدوار جو ماضی میں حکومت کا حصہ رہ کر قومی خزانے کی غیر معمولی لوٹ مار میں ملوث رہے ہیں، ان پر کڑی نظر رکھی جائے۔

السیستانی کے ترجمان نے یہ بات زور دے کر کہی ووٹر عراقی انتخاب کے دوران غیر ملکی ایجنڈے سے دور رہیں اور امیدواروں کی جانچ ان کی خدمات، پیشہ وارانہ اہلیت اور اخلاص کی بنیاد پر کریں کیونکہ حالیہ انتخابات میں متعدد ایسے چہرے بھی نمایاں ہیں جو ماضی کی حکومتوں کا حصہ رہے ہیں۔ انھوں نے دو ٹوک الفاظ میں واضح کیا کہ نجف معلیٰ کسی امیداوار یا سیاسی جماعت کی حمایت نہیں کرتا۔ ہمارے نزدیک تمام امیدوار برابر ہیں۔ ہم کسی فرد، لسٹ یا جماعت کو اس بات کی اجازت نہیں دیتے کہ وہ ہمارا نام استعمال کر کے ووٹروں کو گمراہ کریں۔

العریبہ کے خصوصی ذرائع سے ملنے والی اطلاع میں بتایا گیا ہے کہ متعدد شیعہ امیدوار اپنے کاغذات واپس لینے کی تیاری کر رہے ہیں۔