غزہ میں پُراسرار دھماکا ، حماس کے 6 مزاحمت کار جاں بحق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

غزہ کی پٹی میں حماس کے چھے ارکان ایک بم دھماکے میں جاں بحق ہو گئے ہیں ۔

حماس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہفتے کی شب غزہ پٹی کے وسطی علاقے الزوایدہ میں یہ بم دھماکا ہوا ہے۔غزہ کے میڈیا نے اس واقعے کو ایک حادثہ قرار دیا ہے اور اس کے مطابق حماس کے کارکنان دھماکا خیز مواد اچانک پھٹ جانے سے مارے گئے ہیں ۔

اس سے پہلے غزہ کی وزارت صحت نے پانچ افراد کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کی تھی اور کہا تھا کہ تین افراد زخمی ہوئے ہیں ۔الزوایدہ کے مکینوں نے بھی اس واقعے کو ایک حادثہ قرار دیا ہے جبکہ اسرائیلی فوج کی ایک خاتون ترجمان نے اس واقعے کے بارے میں لاعلمی ظاہر کی ہے۔

واضح رہے کہ غزہ کی پٹی میں پہلے بھی اس طرح حادثاتی طور پر دھماکا خیز مواد یا سلنڈر پھٹنے کے واقعات پیش آتے رہے ہیں ۔حماس اور دوسری مزاحمتی تنظیموں کے متعدد کارکنان ان واقعات کی نذر ہوچکے ہیں ۔

قبل ازیں ہفتے کے روز فلسطینیوں کا ایک گروپ اسرائیل کی لگائی گئی سرحدی باڑھ کو عبور کرتے ہوئے اسرائیلی علاقے میں داخل ہو گیا ۔ فلسطینی مظاہرین نے جمعہ کو مسلسل چھٹی مرتبہ اسرائیل کی چیرہ دستیوں ، فلسطینی سرزمین پر قبضے اور مہاجرین کے حق واپسی کے لیے ہفت وار احتجاجی مظاہرے کیے۔

اسرائیل مخالف یہ احتجاجی مظاہرے حماس کی منظم کردہ مہم کا حصہ ہیں ۔غزہ کے مکین اسرائیلی فوج کی گذشتہ گیارہ سال سے جاری ناکا بندی کے خلاف سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں ۔اسرائیل فوج نے 2007ء کے وسط میں حماس کا غزہ پٹی کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد سے محاصرہ کررکھا ہے۔مارچ کے آخر ی ہفتے کے بعد سے اسرائیلی فوج کی مظاہرین پر براہ راست فائرنگ سے کم سے کم چالیس فلسطینی شہید اور سیکڑوں زخمی ہوچکے ہیں ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں