.

جوہری معاہدے کے تحت اب اپنے وعدوں کا احترام کرنے کے پابند نہیں: لاریجانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی ٹیلی وژن نے بدھ کے روز پارلیمنٹ کے اسپیکر علی لاریجانی کے حوالے سے بتایا ہے کہ امریکی صدر کا 2015ء میں طے پائے گئے جوہری معاہدے سے دست بردار ہونے کا فیصلہ اس سمجھوتے کی خلاف ورزی ہے۔

ایران میں عدلیہ کی ویب سائٹ "میزان آن لائن" کے مطابق لاریجانی اس سے قبل یہ کہہ چکے ہیں کہ ڈونلڈ ٹرمپ امریکی صدر کے منصب کے لیے موزوں نہیں ہیں۔ لاریجانی کے مطابق "ٹرمپ معاملات سے نمٹنے کی ذہنی استعداد نہیں رکھتے"۔

ایرانی ٹی وی کے مطابق پارلیمنٹ کے اسپیکر نے اپنے حالیہ بیان میں کہا ہے کہ "ٹرمپ کے فیصلے کے بعد موجودہ صورت حال کی روشنی میں ایران جوہری معاہدے کے تحت اپنے وعدوں کی پاسداری کا پابند نہیں۔ یہ صورت حال امن و سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔ میں یقین سے نہیں کہہ سکتا کہ آیا معاہدے پر دستخط کرنے والے یورپی ممالک اپنے وعدوں کو پورا کریں گے"۔

انہوں نے کہا کہ "یہ واضح ہو چکا ہے کہ ٹرمپ طاقت کے سوا کوئی زبان نہیں سمجھتے"۔

پارلیمنٹ کے اجلاس کے آغاز پر ارکان پارلیمنٹ نے امریکی پرچم اور جوہری معاہدے کی علامتی کاپی کو نذر آتش کیا۔ ایرانی طلبہ کی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ارکان پارلیمنٹ نے "امریکا مردہ" باد کے نعرے بھی لگائے۔