.

لوبان کا قدیم تہذیبوں سے رشتہ کس نوعیت کا ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عربی لوبان قبل مسیح کے وقت سے معروف ہے۔ قدیم تہذیبوں نے اس پر انحصار کیا جن میں حضرت موت کی مملکت کے علاوہ معین، ثمودیوں اور انباط کی مملکتیں شامل ہیں۔ لوبان اپنے طبّی فوائد کے ساتھ مذہبی اہمیت کا بھی حامل ہے۔ قدیم طب علاج کے مختلف نسخوں میں اس کا استعمال کیا کرتی تھی۔ ان میں بعض نسخوں میں یہ استعمال ابھی تک جاری ہے۔

سلطنتِ عُمان کے صوبے ظفار میں واقع پہاڑی سلسلہ زمین پر لوبان حاصل کرنے کا ایک اہم ترین ذریعہ شمار کیا جاتا ہے۔ لوبان کا درخت مخصوص مقامات پر پایا جاتا ہے۔

کنگ سعود یونی ورسٹی میں آثاریات کے شبعے کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر احمد العبودی کے مطابق جزیرہ عرب کے سرزمین کے ہر حصّے میں خوشبوؤں کو بہت زیادہ اہمیت حاصل رہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ عجائب خانے ہر شکل اور ہر رنگ کے دُھونی دانوں سے بھرے ہوئے ہیں۔ یہ دُھونی دان پتھر، مٹی اور معدنیات کے بنے ہوئے ہیں۔ گھروں میں دُھونیاں عرب ثقافت کا ایک اہم ترین جُزو ہے۔ ہر جگہ کی تہذیب نے دُھونیوں کو مذہبی یا طبّی مقاصد کے لیے استعمال کیا۔

لوبان اور دیگر دُھونیوں کی تجارت کے لیے استعمال میں آنے والے خشکی کے مشکل راستوں پر آمد و رفت کا سلسلہ موقوف ہو گیا۔ ان میں بہت سے راستے تو ظہور اسلام سے قبل ہی ماند پڑ چکے تھے۔ اس کے نتیجے میں عربوں کو ایک بڑے اقتصادی بحران کا سامنا کرنا پڑا۔

قرآن کریم میں بھی ان میں سے ایک مشہور راستے کا ذکر کیا گیا ہے۔ یہ راستہ "ایلاف" کا تھا جس کے ذریعے قریش نے تجارت کی تھی اور یہ اسلام کے ظہور سے قبل قریش اور مکہ والوں کی ثروت کا اہم سبب تھا۔ یہ راستہ مکہ کو شام سے جوڑتا تھا جو موسم گرما کا سفر ہوتا تھا اور مکہ کو یمن سے بھی جوڑتا تھا اور یہ موسم سرما کا سفر ہوتا تھا۔ جیسا کہ قرآن کریم میں آیا ہے کہ : "لإيلاف قريش إيلافهم رحلة الشتاء والصيف".

سلطنت عُمان میں اعلی تعلیم، سائنسی تحقیق اور خارجہ تعلقات کے شعبے کے سربراہ ڈاکٹر احمد بن سلیمان الحراصی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو میں واضح کیا کہ لوبان کی 19 اقسام ہیں جن میں اس کے درخت کی 7 نادر اقسام بھی ہیں۔ یہ اقسام یمن، جزیرہ سماٹرا، عُمان کے جنوب میں واقع علاقے ظفار، ایتھوپیا، سوڈان، صومالیہ، جزیرہ مڈگاسکر اور ہدوستان میں پائی جاتی ہیں۔

الحراصی کے مطابق کو قدیم زمانے سے عالمی سطح پر توجہ اور پذیرائی حاصل رہی ہے۔ آج کے دور میں جرمنی، فرانس، اطالیہ اور امریکا میں لوبان کے حوالے سے تحقیق جاری ہے۔

الحراصی نے باور کرایا کہ لوبان میں قدرتی کارٹیزون پایا جاتا ہے۔ اس وجہ سے یہ ٹینشن، دمہ اور کھانسی کے حوالے سے بہترین اینٹی بائیوٹک ہے۔ اس سے مختلف دواؤں کے کیپسول بھی تیار کیے جا رہے ہیں۔

ڈاکٹر الحراصی نے بتایا کہ آئندہ اکتوبر میں ایک عالمی کانفرنس کا انعقاد ہو رہا ہے جہاں لوبان کے حوالے سے عالمی سطح پر متعدد تجربات پیش کیے جائیں گے۔