.

عراق میں آج پارلیمانی انتخابات کے سلسلے میں ووٹ ڈالے جا رہے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں ہفتے کی صبح پارلیمنٹ کے نئے ارکان کے انتخاب کے لیے پولنگ شروع ہو گئی۔ داعش تنظیم کی شکست کے بعد عراق میں یہ پہلے انتخابات ہیں۔ حکام نے پولنگ مراکز کی سکیورٹی کو یقینی بنانے کے لیے پولیس اور فوج کے تقریبا 9 لاکھ ارکان کو تعینات کیا ہوا ہے۔

عراق میں رجسٹرڈ ووٹروں کی تعداد 2.45 کروڑ ہے۔ پولنگ کا سلسلہ گرینچ کے وقت کے مطابق شام 4 بجے تک جاری رہے گا۔

انتخابات سے متعلق سکیورٹی کمیٹی نے پولنگ کے موقع پر عراق کے کئی صوبوں اور شہروں میں جمعے کی نصف شب سے لے کر ہفتے کی صبح سات بجے تک کرفیو نافد کر دیا تھا۔

ادھر عراقی وزیر اعظم حیدر العبادی نے ایک پریس کانفرنس کے دوران عراقی عوام سے مطالبہ کیا کہ وہ انتخابات میں بھرپور طور پر شرکت کریں تا کہ ملک کو فرقہ وارانہ کوٹے کے نظام سے چھٹکارہ دلانے کے حوالے سے حاصل کامیابیوں کو مضبوط بنایا جا سکے۔

رواں برس انتخابات میں پارلیمنٹ کی 329 نشستوں کے لیے 18 صوبوں میں 7 ہزار سے زیادہ امیدوار میدان میں اترے ہیں۔

عراقی آئین انتخابات کے نتائج کے سرکاری اعلان کے بعد حکومت کی تشکیل کے لیے 90 روز کی مہلت دیتا ہے۔

داعش تنظیم کی جانب سے دھمکیوں کے بعد ووٹنگ کے روز عراق کی تمام سرحدی گزر گاہوں کو بند کر دیا گیا ہے۔

دارالحکومت بغداد کے بھی کئی علاقوں میں پولیس نے پولنگ مراکز تک آنے والے راستوں کی ناکہ بندی کر دی۔

ادھر ملک کے شمال میں دہشت گردوں کے "سابقہ دارالحکومت" موصل میں بھی اسکولوں میں قائم کیے گئے پولنگ مراکز میں ووٹنگ کا آغاز ہو گیا۔