فرانس: شام میں کیمیائی حملوں میں ملوث تین افراد اور 9 کمپنیوں کے اثاثے منجمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

فرانس کی حکومت نے شام میں مبینہ طورپر کیمیائی حملوں میں ملوث ہونے کے شبے میں تین افراد اور 9 کمپنیوں کے اثاثے منجمد کردیے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق فرانسیسی وزیر خزانہ برونولو میر اور وزیرکارجہ جان ایف لوڈریان نے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ ان پابندیوں کامقصد شام کے سائنسی ریسرچ سینٹر کی مدد کرنے والے نیٹ ورک کو نشانہ بنانا ہے۔

خیال رہے کہ امریکا اور دوسرے ممالک نے شام کے سائنسی ریسرچ سینٹر پر بشارالاسد رجیم کےلیے کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری میں مدد دینے کا الزام عایدکیا گیا ہے۔

فرانسیسی وزراء نے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ شام میں کیمیائی ہتھیاروں کی تیاری میں مدد دینے یا بیلسٹک کیمیائی ہتھیار حاصل کرنے میں اسد رجیم کی مدد کرنے والی تین شخصیات کے اثاثے منجمد کیے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ ان کو سیرین کیمیائی گیس اور دیگر کیمیائی مواد فراہم کرنے والی نو کمپنیوں کو بھی بلیک لسٹ کیا گیا ہے۔

ادھر فرانس کے صدر مقام پیرس میں آج 32 ملکوں پر مشتمل ایک کانفرنس ہو رہی ہے جس میں شام میں کیمیائی حملوں کے قصور واروں پر پابندیاں عاید کرنے پر غور کیا جا رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں