.

صنعاء : حوثی ملیشیا ملٹری ورکس کے ساز و سامان کو فروخت کرنے میں مصروف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے دارالحکومت صنعاء میں باغی حوثی ملیشیا نے اپنے زیرِ قبضہ ملٹری ورکس ڈپارٹمنٹ کے جنریٹروں اور بھاری ساز و سامان کی لوٹ مار اور فروخت شروع کر دی ہے۔ اس سامان کی مالیت کروڑوں یمنی ریال ہے۔

مذکورہ شعبے کے ایک عسکری ذریعے نے انکشاف کیا ہے کہ حوثی ملیشیا کے ایک نگراں ابو عمار الہادی نے ملٹری ورکس ڈپارٹمنٹ کے انجینئروں اور ورکروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ گوداموں میں سے جنریٹروں اور دیگر ساز و سامان کو نکال کر انہیں کنٹینروں میں رکھ دیں۔ ابو عمار نے یہ موقف اپنایا ہے کہ وہ اس سامان کو اتحادی طیاروں کے ممکنہ حملوں سے بچانے کے لیے یہ اقدامات کر رہا ہے۔ تاہم اس نے ملیشیا کے دیگر ارکان کے ساتھ مل کر سامان کو مقامی کاروباری افراد کے ہاتھوں فروخت کر ڈالا۔

یمنی فوج کی سرکاری ویب سائٹ نے بھی ملٹری ورکس ڈپارٹمنٹ میں اپنے ذرائع کے حوالے سے مذکورہ حوثی نگراں کے ہاتھوں مختلف نوعیت کا بھاری ساز و سامان فروخت کیے جانے کی تصدیق کر دی ہے۔ سامان میں بجلی کے جنریٹرز اور بھاری مالیت کے واٹر ڈیسٹل نیشن پلانٹس شامل ہیں۔

ادھر مقامی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ حوثی ملیشیا نے صنعاء اور اپنے زیر قبضہ دیگر علاقوں میں آئینی حکومت کے عہدے داروں ، عسکری کمانڈروں اور حکومت کے حامی کاروباری افراد کی پراپرٹی فروخت کرنے کی منصوبہ بندی کر رکھی ہے۔ ذرائع کے مطابق حوثیوں نے بروکروں کے ذریعے مذکورہ شخصیات کے پلاٹس اور گھروں کو فروخت کرنے کی تیاری کی ہے۔

یہ تمام وہ پراپرٹی ہے جس پر حوثی ملیشیا نے صنعاء کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد قبضہ کر لیا تھا۔ صنعاء میں ایک کاروباری شخصیت نے بتایا کہ حوثی ملیشیا نے اس کی ملک میں موجود پراپرٹی کو ایک چوتھائی رقم پر فروخت کر دیا۔

یمنی مبصرین کے مطابق لڑائی کے محاذوں پر گھیرا تنگ ہو جانے کے سبب حوثی ملیشیا نے اپنی لوٹ مار کا سلسلہ اور دائرہ کار بڑھا دیا ہے تا کہ باقی ماندہ سرکاری اور نجی مال پر ہاتھ صاف کیا جا سکے۔