.

امریکا میں موجود ایرانی عہدیداروں کی اولاد کو نکال باہر کرنے کی مہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی سماجی کارکنوں نے امریکا میں ایک نئی مہم شروع کی ہے جس میں امریکی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ملک میں موجود ایرانی عہدیداروں کے بیٹوں اور بیٹیوں کو نکال باہر کرے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکا میں ایرانی عہدیداروں کی اولاد کو نکال باہرکرنے کی مہم کا مقصد ایران میں جاری عوامی احتجاج میں مدد کرنا ہے۔

’وائس آف امریکا‘ نیٹ ورک سے وابستہ ایرانی صحافی علی جوان مردی نے سوشل میڈیا پراس مہم کا آغاز حال ہی میں کیا اور دیکھتے ہی دیکھتے یہ ایرانی اپوزیشن کی ایک موثر مہم میں تبدیل ہوگئی۔ اس مہم میں شامل کارکنان نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ امریکا میں رہنے والے ایرانی عہدیداروں کی اولاد کو نکال باہر کرنے کےحکم دیں۔

مہم میں ایران کی عوامی احتجاج کچلنے کی پالیسی کی شدید الفاظ میں مذمت کے ساتھ ایرانی قوم کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ احتجاج کا سلسلہ جاری رکھے۔

امریکا میں مقیم ایرانی عہدیداروں کے بیٹوں کو نکال باہرکرنے کے لیے ایک دستخطی مہم بھی شروع کی گئی ہے۔ مہم کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ایرانی عناصر جو امریکا مردہ باد کے نعرے لگاتے، امریکی پرچم نذرآتش کرتے اور امریکا کو گالیاں دینے کے ساتھ ساتھ اپنے مفادات کے لیے امریکا میں قیام بھی کرتے ہیں۔ ایسے عناصر کے لیے امریکا میں کوئی جگہ نہیں ہونی چاہیے۔ امریکی حکومت کو چاہیے کہ وہ ایرانی عہدیداروں کی اولاد کو ملک سے نکال باہر کرے۔

خیال رہے کہ امریکا میں ایرانی عہدیداروں کی آل اولاد کو نکال باہر کرنے کا مطالبہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب امریکی حکومت نے ایران کے ساتھ طے پایا جوہری معاہدہ ختم کرنے کے بعد تہران پر پابندیاں عاید کرنا شروع کی ہیں۔