حریری کو یرغمال بنا لینے کے حوالے سے ماکروں کی بات درست نہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی وزارت خارجہ کے ایک ذمّے دار ذریعے نے منگل کے روز اپنے بیان میں کہا ہے کہ فرانسیسی صدر نے ٹی وی انٹرویو میں لبنان کے حوالے سے جو بات کہی ہے وہ درست نہیں۔ فرانسیسی صدر امانوئل ماکروں نے "BFM" ٹی وی چینل سے خصوصی گفتگو میں کہا تھا کہ سعودی عرب نے لبنانی وزیراعظم سعد حریری کی ریاست کو یرغمال بنا رکھا ہے۔

مذکورہ ذریعے کا کہنا ہے کہ "مملکت ہمیشہ سے لبنان کے امن و استحکام کو سپورٹ کرتی رہی ہے اور کرتی رہے گی۔ مملکت تمام تر وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے وزیراعظم حریری کی ریاست کی مدد کر رہی ہے۔ تمام تر شواہد اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ لبنان اور خطّے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے والی قوت ایران اور اس کے حزب اللہ ملیشیا جیسے آلہ کار ہیں۔ یہ دہشت گرد ملیشیا لبنان کے سابق وزیراعظم رفیق حریری کی ہلاکت اور لبنان میں فرانسیسی شہریوں کے قتل میں ملوث ہے۔ علاوہ ازیں ایران نے دہشت گرد ملیشیاؤں کے لیے اپنی مدد کا ہاتھ بڑھا رکھا ہے۔ وہ یمن میں حوثی ملیشیا کو ہتھیار اور بیلسٹک میزائل فراہم کر رہا ہے جن کو سعودی عرب کے شہروں پر حملوں کے واسطے استعمال کیا جا رہا ہے"۔

سعودی سرکاری خبر رساں ایجنسی SPA کے مطابق ذمے دار ذریعے نے اپنے بیان کے اختتام پر کہا کہ مملکت خطے میں انارکی اور تباہی پھیلانے والی طاقتوں سے نمٹنے کے لیے فرانسیسی صدر ماکروں کے ساتھ کام کرنے کے حوالے سے پُر امید ہے، ان طاقتوں میں ایران اور اس کے آلہ کار سرفہرست ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں