خرطوم میں اطالوی سفیر اور ان کا بیٹا سوڈان کے قومی لباس میں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سوڈان میں اطالوی سفیر Fabrizio Lobasso نے ٹوئیٹر پر ایک تصویر پوسٹ کی ہے جس میں مذکورہ سفیر اور ان کا بیٹا دونوں سوڈان کے قومی لباس میں نظر آ رہے ہیں۔

اطالوی سفیر نے سوڈانی لباس میں نظر آنے پر اپنی مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس لباس میں بہت اچھا محسوس کر رہے تھے اور اس لباس کے دیوانے ہو گئے ہیں۔

مذکورہ تصویر کو لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے پسند کیا ہے جس میں اطالوی سفیر سوڈانی چوغے میں ٹوپی پہنے نظر آ رہے ہیں جب کہ ان کی گردن کے گرد مقامی انداز سے رومال لپٹا ہوا ہے۔

سوڈانی صحافی حاتم دردیری نے اطالوی سفیر کے ساتھ اپنی ایک تصویر پوسٹ کی ہے اور سفیر لوباسو کو ایک نرم اور شان دار شخصیت قرار دیا۔

سفیر لوباسو کے نزدیک سوڈان اور اطالیہ کے تعلقات کی تاریخ 350 ق م تک پرانی ہے اور اس پرانے دور میں بھی نمائندوں اور سفیروں کا تبادلہ عمل میں آیا۔ انہوں نے زور دیا کہ سوڈان میں پرانی عبادت گاہوں اور عمارتوں کے علاوہ مروی اور مصورات کے علاقوں میں اطالوی اثر نظر آتا ہے۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے جب غیر ملکی عہدے داران سوڈانی عوامی لباس میں نظر آئے بالخصوص رمضان کے مہینے میں یہ غیر ملکی افطار میں سوڈانیوں کے دسترخوانوں پر جمع ہوتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں