.

حرمین کی فضاؤں میں سکیورٹی ایوی ایشن کس طرح کام کرتی ہے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رمضان مبارک کے دوران جنرل سکیورٹی ایوی ایشن کی جانب سے حرمین شریفین کی فضاؤں میں 2000 سے 3000 فٹ کی بلندی پر معمول کا گشت جاری رہتا ہے تا کہ اُن تمام مقامات کا جائزہ لیا جا سکے جہاں معتمرین اور نمازی موجود ہوتے ہیں۔ فضائی جائزہ زمینی سکیورٹی اقدامات کے ساتھ اضافی طور پر لیا جاتا ہے۔

عمرہ سکیورٹی کے فضائی شعبے کی فورسز کے معاون بریگیڈیئر جنرل شعیل بن یوسف الشعیل نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ "عمرے اور حج کے دوران ٹریفک مانیٹرنگ عارضی نگرانی ہوتی ہے۔ اصل مشن زمینی طور پر کام کرنے والے ورکروں کی کارکردگی کا کا جائزہ، اس کی جانچ کرنا اور زائرین، معتمرین اور حجاج کی مکہ مکرمہ آمد کی نگرانی ہے۔

الشعیل نے مزید بتایا کہ "کسی بھی غیر معمولی صورت حال کا پتہ چلنے پر زمینی کمانڈر کو اس سے نمٹنے کی اطلاع کی جاتی ہے۔ بنیادی ذمے داریوں میں غیر معمولی صورت حال کا وقت پر سامنے آ جانا، سکیورٹی اور ٹریفک کی سلامتی سے متعلق پلان پر عمل درامد، فیلڈ کمانڈر تک معلومات پہنچانا، پلان پر عمل درامد میں کسی بھی تعطل سے آگاہ کرنا اور کثرتِ آمد کے حوالے سے خبردار کرنا شامل ہے"۔

الشعیل کے مطابق مغرب سے کچھ دیر پہلے سے لے کر نماز تراویح کے اختتام تک المرکزیہ کے علاقے میں نمازیوں اور معتمرین کی نہایت کثریت ہوتی ہے۔ اس دورانیے کو مناسب طور گزارنے کے لیے ٹائم ٹیبل ترتیب دیا جاتا ہے۔ سکیورٹی آپریشن میں استعمال ہونے والے ہیلی کاپٹروں میں کوگر، بلیک ہاک اور ایس 28 شامل ہیں۔

خادم حرمین شریفین کی حکومت نے حجاج اور معتمرین کی راحت اور اطمینان کو یقینی بنانے کے لیے فضائی نگرانی سمیت سکیورٹی کا ایک مربوط نظام ترتیب دیا ہے۔ اس واسطے مملکت تمام تر افرادی قوت اور مادی وسائل کو بروئے کار لا رہی ہے۔