.

دہشت گردی کے لیے فنڈنگ،قرضاوی کی بیٹی اور داماد 45 دن کے لیے پولیس کے حوالے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی ایک فوج داری عدالت نے معروف عالم دین علامہ یوسف القرضاوی کی صاحبزادی اور ان کے شوہرانجینیر حسام خلف کو دہشت گردی کے الزام میں ڈیڑھ ماہ کے لیے حراست میں رکھنے اوران سے پوچھ تاچھ کرنے کا حکم دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مصری نژاد قطری عالم دین علامہ یوسف القرضاوی کی بیٹی اور ان کے شوہر کو مصری پولیس نے چند ماہ قبل مصر کےایک سیاحتی مقام سے حراست میں لیا تھا۔

الوسط پارٹی سے تعلق رکھنے والے حسام خلف اور ان کی اہلیہ پر خلاف قانون جماعت سے تعلق، حکومت کاتختہ الٹے پراکسانے، دہشت گرد تنظیم کے لیے فنڈز جمع کرنے اور دہشت گردوں کو اسلحہ کی خریداری میں معاونت فراہم کرنے جیسے الزامات عاید کیے گئےہیں۔

خیال رہے کہ علامہ یوسف القرضاوی کی صاحبزدی علا القرضاوی اور ان کے شوہر انجینیر حسام خلف کو مصری فوج نے گذشتہ برس جولائی میں شمالی ساحلی علاقے سے حراست میں لیا تھا۔

مصر کے ایک سیکیورٹی ذریعے نے’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ علا قرضاوی قطر اور مصر دونوں کی شہریت رکھتی ہیں اور وہ کئی سال تک قاہرہ میں قطری سفارت خانے میں خدمات انجام دے چکی ہیں۔

علا قرضاوی کے وکیل احمد ابو اعلا ماضی نے اپنے ایک سابقہ بیان میں کہا تھا کہ ان کی موکلہ علا اور ان کے شوہر پر خلاف قانون قائم کردہ جماعت سے تعلق اور اخوان المسلمون کی مالی معاونت کے الزامات عاید کیے گئے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں وکیل نے کہا کہ تفتیش کے دوران دونوں میاں بیوی نے اپنے اوپر عاید الزامات کی نفی کی ہے کہ ان کا حزب الوسط یا اخوان المسلمون سے کوئی تعلق ہے۔

شادی کے بعد سے علا قرضاوی زیادہ عرصہ مصر ہی میں مقیم رہی ہیں تاہم وہ قطر بھی آتی جاتی ہیں۔ البتہ ان کے بھائی اور والد بہت کم مصر میں قیام کرسکے۔علا قرضاوی کے تین بیٹے اور دو بیٹیاں ہیں۔ ایک بیٹا مصر میں انجینیر ہے جب کہ بڑی بیٹی شادی کے بعد امریکا میں مقیم ہے اور دیگر بچے امریکا میں زیرتعلیم ہیں۔