’القدس‘ خطے میں دیر پا امن کی کلید ہے: شاہ اردن

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو کا مختصر دورہ اردن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اردن کے فرمانروا شاہ عبداللہ دوم نے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو کو باور کرایا ہے کہ مشرقی بیت المقدس خطے میں امن واستحکام کےقیام کے لیے کلید کا درجہ رکھتا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اردنی فرمانروا نے ان خیالات کا اظہار گذشتہ روز مختصر دورے پرآئے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو سے ملاقات کےدوران کیا۔ انہوں نے تنازع فلسطین ۔ اسرائیل کے حل کے لیے دو ریاستی حل پرعمل درآمد پر زور دیا اور کہا کہ مسئلہ فلسطین عالمی قراردادوں اور عرب ممالک کے پیش کردہ امن فارمولے کی روشنی میں حل ہونا چاہیے۔ ہم ایک ایسی فلسطینی مملکت کےقیام کا مطالبہ کرتے ہیں جس میں سنہ1967ء کی جنگ میں قبضے میں لیے گئے علاقوں کوشامل کیا جائے۔ مشرقی بیت المقدس کو فلسطین کا دارالحکومت تسلیم کیا جائے تاکہ خطے میں دیر پا امن کے قیام کی راہ ہموار ہوسکے۔

اردنی فرمانروا نے واضح کیا کہ القدس ایک عظیم المرتبت مقام اور خطے میں امن کی چابی ہے۔ القدس کے معاملے کو فلسطین ۔ اور اسرائیل مل کر بات چیت کے ذریعے حل کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ اردن القدس کے تمام تاریخی مقدس مقامات کی حفاظت کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری کرے گا۔ ملاقات میں دونوں ملکوں نے دریائے اردن کے مغربی کنارے میں دو طرفہ تجارتی سرگرمیوں پرعاید کردہ پابندیوں کو اٹھانے پرغور کرنے سے بھی اتفاق کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں