مسلسل 69 دن کے انتظار کے بعد تیل بردار جہاز الحدیدہ بندرگاہ میں داخل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یمن میں آئینی حکومت کی حمایت میں قائم عرب اتحاد نے بتایا ہے کہ ایک تیل برار بحری جہاز کو 69 روز کے مسلسل انتظار کے بعد الحدیدہ بندرگاہ میں داخل ہونے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کے مطابق عرب اتحاد کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ تیل بردار بحری جہاز’ایم ٹی رھونا‘ کو حوثی ملیشیا کی جانب سے الحدیدہ بندرگاہ میں داخلے سے 69 روز تک روکا گیا تھا۔

خیال رہے کہ حوثی ملیشیا کی طرف سے دو بحری جہازوں ’گریٹ کی‘ اور ’ایم ٹی رھونا‘ کو دو ماہ سے زاید عرصے سے الحدیدہ بندرگاہ میں داخل ہونے سے روکا گیا تھا۔ یہ دونوں جہاز انہتر روز تک بندرگاہ میں داخلے کے منتظر رہے۔ گذشتہ روز ایک جہاز کو بندرگاہ میں لنگر انداز ہونے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

بندرگاہ کا کنٹرول سرکاری فوج اور عرب اتحاد کے پاس آنے کے بعد انتظار میں کھڑے بحری جہازوں کو الحدیدہ بندرگاہ پر لنگر انداز ہونے کی اجازت دینے کا عمل شروع کردیا گیا ہے۔

الحدیدہ بندرگاہ کی طرف آنے والے بحری جہازوں میں تیل بردار اور امدادی سامان سے لدے جہاز بھی شامل ہیں۔ دوسری جانب حوثی ملیشیا ہٹ دھرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے عرب اتحاد کی طرف سے بھیجے گئے امدادی سامان بردار جہازوں کو داخلے سے روکےہوئے تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں