.

لیبیا کے ساحل کے نزدیک 63 افراد لا پتہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں بحریہ نے منگل کی صبح ایک اعلان میں بتایا ہے کہ اتوار کے روز لیبیا کے ساحل کے نزدیک ڈوب جانے والی کشتی کے 41 غیر قانونی تارکین وطن کو بچا لیا گیا ہے جب کہ 63 افراد ابھی تک لا پتہ ہیں۔

لیبیا کی بحریہ کے ترجمان میجر جنرل ایوب قاسم کے مطابق جن 41 افراد کو بچایا گیا انہوں نے لائف جیکٹ پہن رکھی تھی۔ بچ جانے والوں نے بتایا ہے کہ دارالحکومت طرابلس سے 50 تقریبا کلو میٹر مشرق میں ڈوبنے والی کشتی میں کُل 104 افراد سوار تھے۔

ترجمان نے بتایا کہ مذکورہ افراد کے علاوہ پیر کے روز لیبیا کی بحریہ کا ایک جہاز طرابلس پہنچا جس پر 235 مہاجرین سوار تھے۔ ان افراد کو اسی علاقے میں دو مختلف آپریشنز میں بچایا گیا تھا۔ بچ جانے والوں میں 54 بچے اور 29 عورتیں ہیں۔

کشتی ڈوب جانے کے تازہ واقعے کے بعد اب جمعے سے اتوار کے درمیان بحیرہ روم میں لاپتہ ہونے والے مہاجرین کی مجموعی تعداد 170 ہو چکی ہے۔

لیبیا کے مغربی ساحلی علاقے کے راستے جنگ زدہ اور غربت زدہ ممالک سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد پُر خطر سفر کے بعد یورپ میں پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ تاہم خطرات سے بھرے حالات میں بحیرہ روم عبور کرنے کی کوشش کے دوران ہر سال سیکڑوں غیر قانونی مہاجرین اور تارکین وطن اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔

لیبیا کے نزدیک یورپ نے اس معاملے سے اپنی توجہ ہٹا لی ہے اور اب لیبیا اپنی سرزمین عبور کرنے والے مہاجرین کا تنہا سامنا کر رہا ہے۔ واضح رہے کہ 2011ء میں معمر قذافی کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے لیبیا انارکی میں ڈوبا ہوا ہے اور وہ عدم استحکام اور اقتصادی بحران سے دوچار ہے۔