عراق : اربیل صوبے کی عمارت پر داعش کا حملہ ، متعدد افراد یرغمال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق کے شمالی شہر اربیل میں کرد سکیورٹی حکام نے بتایا ہے کہ پیر کے روز شہر میں اربیل صوبے کی عمارت کو ایک اور مسلح شخص نے خود کش دھماکے کا نشانہ بنایا ہے۔ یہ کارروائی عمارت پر حملہ کرنے والے کئی مسلح افراد کی ہلاکت کے بعد سامنے آئی۔ اس حوالے سے ذمّے داران کا کہنا ہے کہ متعدد یرغمال اب بھی عمارت کے اندر موجود ہیں جس کی تیسری منزل پر مسلح افراد نے قبضہ کر رکھا ہے۔

سکیورٹی عہدے داران کے مطابق غالبا حملہ آوروں کا تعلق داعش تنظیم سے ہے۔

اس سے قبل اربیل کے نائب گورنر اور کرد سکیورٹی حکام نے بتایا تھا کہ پیر کی صبح 7:45 پر دو مسلح افراد صوبائی حکومت کی عمارت کی جانب بڑھے اور داخلی دروازے پر پہرے داروں پر فائرنگ کرتے ہوئے عمارت کی تیسری منزل پر جا پہنچے۔ حملہ آوروں نے عمارت کی کھڑکیوں سے کرد سکیورٹی فورسز پر بھی فائرنگ کی۔

العربیہ کے نمائندے کے مطابق حملہ آوروں کی تعداد تین ہے۔ تاہم ابھی تک حملہ آوروں اور یرغمال بنائے جانے والے افراد کی درست تعداد معلوم نہیں ہو سکی ہے۔

سکیورٹی حکام کے مطابق سکیورٹی فورسز نے عمارت کے اطراف کی سڑکوں کو خالی کرا لیا ہے اور عمارت کو محاصرے میں لے کر زمینی منزل میں داخل ہو چکی ہیں تا کہ مسلح افراد پر حملے کی تیاری کی جا سکے۔

ابھی تک واضح نہیں ہوا کہ حملے کے پیچھے کس کا ہاتھ ہے۔

اربیل میں اس طرح کا حملہ نادر نوعیت کا ہے کیوں کہ اسے عراق میں امن و امان کے لحاظ سے سب سے زیادہ مستحکم شہروں میں شمار کیا جاتا ہے۔

عراق میں بڑے پیمانے پر شکست کا منہ دیکھنے والی داعش تنظیم ماضی میں اربیل میں میں دھماکے کر چکی ہے۔ اس کے علاوہ شدت پسند تنظیم نے گزشتہ برسوں میں کرد سکیورٹی فورسز اور کرد شہریوں کو بھی نشانہ بنایا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں