فلسطینی چاقو حملے کے جواب میں یہودیوں کے لیے400 گھروں کی تعمیر

’فلسطینی ’دہشت گردی‘ کا بہتر جواب یہودی آباد کاری میں اضافہ‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطین کے علاقے غرب اردن میں گذشتہ روز ایک فلسطینی لڑکے کے فدائی حملے میں ایک یہودی آباد کار کی ہلاکت اور دو کے زخمی ہونے کے واقعے کے بعد صہیونی حکومت نے انتقامی کارروائی کے تحت غرب اردن میں یہودیوں کے لیے 400 گھروں کی تعمیر کی منظوری دی ہے۔

اسرائیل کے شدت پسند وزیر دفاع آوی گیڈور لائبرمین نے ایک یہودی آباد کار کے قتل کے جواب میں فلسطینیوں کو چار سو یہودیوں کے مکانات کی تعمیر کی شکل میں قیمت چکانے پرمجبورکیا ہے۔

مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ ’ٹوئٹر‘ پرپوسٹ کردہ ایک بیان میں اسرائیلی وزیر دفاع لائبرمین نے کہا کہ فلسطینیوں کی ’دہشت گردی‘ کا بہتر جواب یہودی آباد کاری میں اضافہ ہے۔ میں غرب اردن کے علاقے رام اللہ میں ’آدم‘ یہودی کالونی میں مزید 400 مکانات کی تعمیر کا اعلان کرتا ہوں۔

خیال رہے کہ جُمعرات کو غرب اردن کے وسطی شہر رام اللہ میں قائم ’آدم‘ یہودی کالونی کےقریب ایک فلسطینی نوجوان نے چاقو کے پے درپے وار کرکے کم سے کم چار ایک یہودی آباد کار ہلاک اور دو زخمی کردیے تھے۔ اسرائیلی فوج کی جوابی کارروائی میں سترہ سالہ حملہ آور بھی شہید ہوگیا تھا۔

اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ فلسطینی لڑکے نے یہودی آباد کاروں پر چاقو سے حملے کئے جس کے نتیجے میں متعدد یہودی زخمی ہوگئے۔ بعد ازاں ایک یہودی آباد کار زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔ زخمی ہونے والے آباد کاروں کو اسپتل منتقل کردیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں