.

حمد خاندان کے جرائم پر بنا کسی استثناء اُس کا احتساب کریں گے : بن سحیم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کے شاہی خاندان کی معروف شخصیت شیخ سلطان بن سحیم آل ثانی نے باور کرایا ہے کہ دوحہ کے حکام کا اپنے شہریوں کو فریضہ حج کی ادائیگی سے روکنا اس بات کا ثبوت ہے کہ وہ ملک پر حکمرانی کے اہل نہیں ہیں۔ جمعے کے روز اپنی ٹوئیٹ میں شیخ سلطان نے زور دے کر کہا کہ قطر کے عوام حکمرانوں کے ظلم سے خلاصی حاصل کرنے کے بعد بنا کسی استثناء کے ان کا احتساب کریں گے۔

ایک دوسری ٹوئیٹ میں شیخ سلطان کا کہنا تھا کہ "ان (حکمرانوں) کی جانب سے شورش اور تخریب کی سپورٹ اپنی انتہا پر ہے۔ نئے دور کے قرامطیوں (اسماعیلی شیعہ) کو اللہ اور اس کے رسول کا کوئی خوف نہیں۔ ان کے لیے دنیا میں رُسوائی ہے اور آخرت میں بہت بڑا عذاب ہو گا"۔

شیخ سلطان بن سحیم اس سے قبل بھی اپنی متعدد ٹوئیٹس میں قطر کے عوام کو فریضہ حج سے محروم رکھنے کے لیے قطری حکومت کے تصرفات پر حیرت کا اظہار کیا تھا۔ انہوں نے دوحہ حکومت کو خبردار کیا کہ اس پست اقدام پر تاریخ اُن کو انصاف کے کٹہرے میں لے کر آئے گی۔

شیخ سحیم کے مطابق ایسے میں جب کہ دنیا کے ہر کونے سے مسلمان بیت اللہ کا رخ کر رہے ہیں اور مملکت سعودی عرب نے لاکھوں عازمین حج کے لیے اپنی سرحدوں سے قبل اپنا دل کھول دیا ہے... قطر کی یہ حکومت اپنے شہریوں کو مسلسل دوسرے سال حج سے روک رہی ہے۔ اس کا تمام وبال اُن لوگوں پر ہے جو دین اور اخلاق سے عاری ہیں"۔