یمنی صحافی جنگ کی کوریج کے دوران حوثیوں کی بارودی سرنگ کا شکار: وڈیو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یمن میں ایرانی حمایت یافتہ حوثی دہشت گردوں نے اپنے زیرتسلط علاقوں میں بڑے پیمانے پر بارودی سرنگیں بچھا کر شہریوں کے لیے قدم قدم پر موت کا سامان کررکھا ہے۔ آئے روز بے گناہ شہری حوثیوں کی دہشت گردانہ کارروائیوں کےساتھ ساتھ ان بارودی سرنگوں کا شکار ہوتے ہیں۔ حوثیوں کی بارودی سرنگوں کا تازہ شکار فوٹو جرنلسٹ عیسیٰ النعمی بنے جو جنگ کی کوریج کے دوران ایک بارودی سرنگ سےٹکرا کر زندگی کھو بیٹھے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق عیسیٰ النعمی ’یمن الشباب‘ ٹی وی چینل سے منسلک تھے۔ وہ صعدہ گونری کے علاقے باقم میں جنگ کی کوریج کے دوران بارودی سرنگ کے دھماکے میں شہید ہو گئے۔

شہید کے ساتھ صحافی اسامہ فراج نے’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ النعمی ایک بہادر اور نہ ڈر صحافی تھے جو خطرات اور مشکلات کو خاطر میں لائے بغیر اپنے پیشہ وارانہ امور انجام دینے میں ہمیشہ پیش پیش رہتے۔ ہم نےیمن میں حوثیوں کی مسلط کردہ جنگ کی کوریج کے ساتھ ساتھ کئی دوسرے ایشوز کی بھی رپورٹنگ کی۔ مشکل سے مشکل محاذ میں بھی پہنچے اور ہرطرح کے حالات کا جواں مردی کے ساتھ مقابلہ کیا۔

فراج نے بتایا کہ گذشتہ منگل کو النعمی اور میں باقم ڈائریکٹوریٹ کے آہنی دروازے پر تھے۔ جب ہم اندر داخل ہونے لگے تو ہم پر دسیوں دستی بم پھینکے گئے۔ ہمیں شہر کے اندر داخل ہونے کے لیے مرکزی شاہراہ کے بجائے ایک دوسرا راستہ اختیار کرنا پڑا وہاں اس راستے پر بھی جگہ جگہ بم ہمارا استقبال کررہے تھے۔ ہم نے حوثیوں کی قدم قدم پر بچھائی باردی سرنگوں کی بھی کوریج کی۔

اسامہ فراج نے بتایا کہ میں میرا ساتھی النعمی باقم ڈائریکٹوریٹ کے قلب میں محدیدہ کے مقام تک جا پہنچا۔ میں نے اسے اپنی جان کو خطرے میں نہ ڈالنے کا مشورہ دیا کیونکہ جس علاقے میں ہم داخل ہوگئے تھے وہاں سے بارودی سرنگوں کو صاف نہیں کیا گیا تھا۔ اس کے علاوہ یہ علاقہ حوثیوں کے نشانہ بازوں کی موجودگی کے خطرے سے بھی دوچار تھا۔

جدائی کا لمحہ

عیسیٰ النعمی نے میری تھوڑی سے لاپرواہی اور عقبی علاقوں کی تصویری کوریج میں مصروفیت کی وجہ سے اپنا کیمرہ لیے براہ راست لڑائی کے میدان کی طرف نکل گیا۔ اس نے نشانہ بازوں سے بچنے کے لیے مخصوص لباس زیب تن کر رکھا تھا۔ چلتےچلتے وہ اچانک ایک باردوی سرنگ سے ٹکرا گیا جس کے نتیجے میں ایک زور دار دھماکہ ہوا اور النعمی کا دھڑ بری طرح کچل گیا۔ ایک طبی امدادی کارکن نے اسے حوثیوں کی گولیوں سے بچانے کے لیے طبی مدد فراہم کرنے کی کوشش کی مگر حوثیوں نے اس کی مدد کرنے سے روک دیا۔ حوثیوں کی فائرنگ سے امدادی کارکن بھی زخمی ہوگیا۔ دونوں کو اسپتال منتقل کیا گیا تو النعمی اسپتال پہنچتے ہی زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں