بیٹے کی رہائی میں ٹال مٹول پرقذافی کی بیوہ کی ’یو این‘ میں شکایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

لیبیا کے مقتول لیڈرکرنل معمر قذافی کی بیوہ صفیہ فرکاش نے اقوام متحدہ کے جنیوا میں انسانی حقوق ہائی کمیشن کو شکایت کی ہے کہ لیبیا کے حکام نے اس کے بیٹے الساعدی القذافی کی رہائی کے عدالتی فیصلے پرعمل درآمد سے انکار کردیا ہے۔

قذافی خاندان کے وکیل خالد الزایدی نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کوبتایا کہ صفیہ فرکاش کی طرف سے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کو دی گئی درخواست میں لیبیا کی ’عین زارہ‘ نامی جیل کے میں قید اپنے بیٹے الساعدی القذافی کی فوری رہائی کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے ھاشم علی بشر اور ھیثم احمد عبداللہ القبائلی المعروف ھیثم التاجروی کو الساعدی کی رہائی میں رکاوٹ کا ذمہ دار قرار دیا ہے۔

درخواست میں کہا گیا ہے کہ عدالت نے الساعدی القذافی پر عاید الزامات بے بنیاد قرار دیتے ہوئے انہیں بری کردیا ہے مگر جیل حکام عدالتی احکامات پرعمل درآمد میں ٹال مٹول سے کام لے رہےہیں۔

خیال رہے کہ ھاشم علی بشر لیبیا کی قومی وفاق حکومت کے سربراہ فائز السراج کے سیکیورٹی مشیر جب کہ ھیثم التاجوری طرابلس انقلابی بریگیڈ سے منسلک ہیں اور یہ گروپ طرابلس کے بیشتر علاقوں پر قابض ہے۔

قذافی فیملی کے وکیل الزایدی کا کہناہے کہ الساعدی القذافی کی بریت کے بعد اسے ظالمانہ قید میں رکھنا بین الاقوامی قوانین کی رو سے سنگین جرم ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بین الاقوانی انسانی حقوق چارٹر کے آرٹیکل 9 کےتحت عدالت کی طرف سے بری ہونے والے کسی بھی شخص کوحراست میں رکھنا نہ صرف عدالتی امورمیں مداخلت بلکہ بین الاقوامی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں