سپریم لیڈر نظام بچانے کے لیے جامع اصلاحات کا اعلان کریں: خاتمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایران کے سابق صدر محمد خاتمی نے برسراقتدار ولایت فقیہ کے نظام کو سقوط سے بچانے کے لیے فوری، موثر اور جامع اصلاحات کا مطالبہ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایران کے اصلاح پسند حلقوں کے رہ نما اور سابق صدر محمد خاتمی نے سنہ1980ء کی ایران ۔ عراق جنگ میں معذور ہونے والے فوجیوں کےحوالےسے منعقدہ تقریب سے خطاب میں کہا کہ نظام کو بچانے کے لیے رہ برانقلاب اسلامی آیت اللہ علی خامنہ ای کو جامع اصلاحات کا اعلان کرنا ہوگا۔

دوسری جانب ایران کے بعض ذرائع ابلاغ نے خبر دی ہے کہ حکومت نے سابق صدر محمد خاتمی پرعاید کردہ پابندیاں اٹھانے یا ان میں نرمی کا عندیہ دیا ہے۔

سابق صدر نے اپنے بیان میں کہا کہ عوام کا اعتماد حاصل کرنے کے لیے ان کے خلاف تشدد کا راستہ بند کرنا ہو گا۔ اگر ملک میں اصلاحات نہیں لائی جاتیں تو نظام کو خطرہ رہے گا اور نظام کسی بھی وقت سقوط کا شکار ہو سکتا ہے۔

محمد خاتمی نے عوام کے خلاف طاقت کے استعمال کی پالیسی کو مسترد کردیا اور کہا کہ مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف احتجاج کرنے والے عوام پر تشدد کا کوئی جواز نہیں۔ حکومت کو اپنی ناکامی تسلیم کرتے ہوئے عوام کے جائز مطالبات پورے کرنا ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک کے موجودہ ابتر حالات کے ذمہ دار عوام نہیں۔

سابق صدر نے ملک کو موجودہ بحران سے نکالنے کے لیے 15 حل تجویزکیے ہیں۔ ان میں سبز انقلاب تحریک کے گرفتار رہ نماؤں اور کارکنوں کی رہائی، تمام سیاسی قیدیوں کی رہائی، ابلاغی پالیسی میں تبدیلی اور عمومی آزادیوں کے لیے شہریو پرعاید کردہ قدغنوں میں نرمی کرنا شامل ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں