.

العبادی کی تنقید کا مقصد امریکا کی چاپلوسی اور وزارت عظمی کا دوبارہ حصول ہے : الحشد الشعبی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں معروف شیعہ ملیشیا الحشد الشعبی نے وزیراعظم حیدر العبادی کے موقف کو سیاسی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ العبادی کی جانب سے دوسری مرتبہ وزارت عظمی کے حصول کے لیے کی جانے والی حالیہ کوششوں کا حصّہ ہے۔

ملیشیا کی قیادت نے زور دے کر کہا کہ حیدر العبادی کی جانب سے گزشتہ برسوں کے دوران دباؤ اور ہتھیاروں کی پالیسی کا استعمال درحقیقت امریکیوں کی چاپلوسی تھا تا کہ اپنے مقصد کو یقینی بنایا جا سکے۔

الحشد کے بیان میں عراقی وزیراعظم پر الزام عائد کیا کہ انہوں نے ملیشیا کو معنوی طور پر ڈھیر کرنے کے لیے اُس کو نکتہ چینی کا نشانہ بنایا ،،، اس طرح العبادی نے شیعہ مذہبی قیادت کی اُن ہدایات کی خلاف ورزی کی جو الحشد الشعبی ملیشیا کی نمایاں شخصیات پر تنقید نہ کرنے کی متقاضی تھیں۔

عراقی وزیراعظم اور مسلح افواج کے جنرل کمانڈر حیدر العبادی کے دفتر کی جانب سے جاری دستاویز میں یہ انکشاف ہوا تھا کہ العبادی نے الحشد الشعبی کی طرف سے شائع کردہ کتابچوں کے متن کو منسوخ کرنے کی ہدایت کی۔

دستاویز کے مطابق العبادی نے یہ فیصلہ کیا کہ الحشد ملیشیا کی جانب سے جاری اُن کتابچوں کو منسوخ کر دیا جائے جن میں ملیشیا کے یونٹوں کی منتقلی اور قانون اور ہدایات کی پاسداری کی ضرورت کے حوالے سے متن موجود تھا۔

دستاویز میں یہ بھی باور کرایا گیا کہ کسی بھی قسم کی نئی تشکیل صرف مسلح افواج کے جنرل کمانڈر یعنی العبادی کی منظوری کے بعد ہی عمل میں آ سکے گی۔

اسی طرح مشترکہ آپریشنز کی کمان کے ساتھ رابطہ کاری اور مسلح افواج کے جنرل کمانڈر کی آمادگی کے بغیر کسی بھی مسلّح گروپ کی تشکیل کو ممنوع قرار دیا گیا۔