.

عدم مداخلت کی بنیاد پر علاقائی تعلقات چاہتے ہیں : حیدر العبادی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراقی وزیراعظم حیدر العبادی جن کی مدّت اختتام کے قریب ہے، اُن کا کہنا ہے کہ عراق خود مختاری اور اندرونی معاملات میں عدم مداخلت پر قائم علاقائی تعلقات کا خواہاں ہے۔ انہوں نے باور کرایا کہ ریاست کے اختیار سے باہر کسی قسم کے ہتھیار کی کوئی گنجائش نہیں۔

پیر کے روز عراقی پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے العبادی نے نئے ایوان پر زور دیا کہ وہ آئندہ حکومت کے ساتھ تعاون کرے اور نفرت آمیز فرقہ وارانہ لہجے کو پھر سے زندہ نہ ہونے دے۔ العبادی نے زور دے کر کہا کہ آئندہ مرحلے میں خدمات اور تعمیرِ نو پر توجہ مرکوز کی جائے۔ انہوں نے تمام سیاسی جماعتوں سے کہا کہ وہ عراقیوں کی امنگوں کو پورا کرنے کے لیے مسابقت کا مظاہرہ کریں۔

عراقی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ "ہم نے جب حکومت سنبھالی تو ملک داعش کے قبضے کے سبب برباد حالت میں تھا"۔ انہوں باور کرایا کہ عراق نے وہ مقام حاصل کر لیا ہے جس کا وہ اپنے عرب اور علاقائی اطراف میں حق دار ہے۔

حیدر العبادی سے قبل عراقی صدر محمد فؤاد معصوم نے پارلیمنٹ سے خطاب کیا۔ معصوم کا کہنا تھا کہ وہ ایسا عراق چاہتے ہیں جہاں تنوع، مساوات اور فراخ دلی ہو۔ انہوں نے عراق میں بدعنوانی اور فرقہ واریت کو مسترد کیے جانے کی ضرورت پر زور دیا۔ معصوم کے مطابق دہشت گردی کے خلاف فتح یابی کے ساتھ پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس کا انعقاد ایک تاریخی لمحہ ہے۔

عراقی صدر نے اس امید کا اظہار کیا کہ ارکان پارلیمنٹ ایک مضبوط حکومت کے چُناؤ میں کامیاب ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ پانی کا مسئلہ حل کرنے اور عراق کے آبی حقوق کی ضمانت کے لیے بین الاقوامی سطح پر حرکت میں آنا چاہیے۔

ادھر عراقی پارلیمنٹ کے سابق اسپیکر سلیم الجبوری کا کہنا ہے کہ رکاوٹوں اور پیچیدگیوں کے باوجود سابقہ پارلیمنٹ نے اہم کامیابیاں حاصل کیں۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ عراق کو اس بات کی اشد ضرورت ہے کہ سیاسی فوائد کو برقرار رکھا جائے۔

اپنے خطاب کے اختتام پر الجبوری نے معمّ ترین رکن سے مطالبہ کیا کہ وہ پارلیمنٹ کے پہلے اجلاس کا آئینی طور پر آغاز کریں۔