.

حسن نصر اللہ اپنے آخری خطاب میں کیوں رو پڑے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

معروف سعودی صحافی مشاری الذایدی نے العربیہ نیوز چینل پر اپنے پروگرام "مرایا" میں سوال اٹھایا کہ رواں سال یوم عاشور کے موقع پر خطاب کے دوران لبنانی ملیشیا حزب اللہ کے سکریٹری جنرل حسن نصر اللہ کے رونے کی وجہ کیا تھی ،،، جب کہ ماضی میں وہ اس موقع پر عوام سے مصیبت میں صبر اور غم میں عدم مبالغے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔

مشاری نے نصر اللہ کے اس " یُوٹرن" پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا مذہب کے حوالے سے انسانی جذبات کا جنم لینا اور اس پر آبدیدہ ہو جانا ایک قدرتی امر ہے تاہم بعض لوگ ان جذبات کو سیاسی مقاصد اور پروپیگنڈے کے واسطے استعمال کرتے ہیں۔ حزب اللہ کے سربراہ بھی اس طرح کے لوگوں میں سے ہیں۔ حزب اللہ نے اپنے مفادات کے لیے لبنان میں شیعوں کے روایتی جذبات کا استحصال کیا۔ اس کے لیے الکٹرونک اور پرنٹ میڈیا کے وسائل کو بروئے کار لایا گیا۔

مشاری کے مطابق یوم عاشور کے حوالے سے نصر اللہ کے گزشتہ چند برسوں کے خطاب اور تقریروں کا جائزہ لیا جائے تو یہ بات واضح ہوتی ہے کہ حزب اللہ کے سربراہ ہر سال اپنے سیاسی مقاصد اور ضروریات کے مطابق گفتگو کا طریقہ کار بدلتے رہتے ہیں۔

ماضی میں نصر اللہ اس امر پر خطباء اور مقررین کی مذمت کرتے رہے ہیں کہ وہ محرم کی مجالس میں واقعہ کربلا کی یاد تازہ کرتے ہوئے مبالغہ آرائی سے کام لیتے ہیں تا کہ حاضرین کو رونے پر مجبور کیا جا سکے۔ دو سال پہلے نصر اللہ کا کہنا تھا کہ کربلا کے واقعات اور باتیں یقینا غمگین کر دینے والی ہیں تاہم اس میں بنیادی سبق "صبر" ہے۔ نصر اللہ نے کربلا میں خونی ماتم کرنے والے شیعوں سے مخاطب ہو کر کہا تھا کہ "آپ لوگ ماتم میں جو خون بہاتے ہیں ،،، اسی خون کو شام میں جاری معرکہ آرائی میں کیوں نہیں بہاتے؟"۔

البتہ رواں سال محرم کے خطاب میں حزب اللہ کے سربراہ دوران گفتگو خود ہی پھوٹ پھوٹ کر رونے لگے جس پر حاضرین اور سامعین میں بھی گریہ و زاری شروع ہو گئی۔

آزادانہ مواقف رکھنے والے ایک باضمیر کویتی دانش اور مصنف خلیل حیدر کہتے ہیں کہ "عسکریت پسند تنظیمیں مذہب کا کارڈ استعمال کر کے لوگوں کے جذبات سے کھیلتی ہیں تا کہ اپنے مذموم سیاسی مقاصد کو پایہ تکمیل تک پہنچا سکیں۔ میں عرب ممالک میں شیعہ عوام سے اپیل کرتا ہوں کہ ایسے عناصر کا شکار ہونے سے بچیں۔ اس لیے کہ یہ اُن کے قومی مفادات کے لیے نقصان دہ ہے"۔

مشاری نے کہا کہ "یہ بات یاد رکھنا چاہیے کہ لبنان میں شیعہ عوام خمینی اور نصر اللہ کے دنیا میں آنے سے پہلے بھی شیعہ ہی تھے ،،، لیکن معلوم نہیں کہ اب ایسا کیا ہو گیا ہے جو ان امور کو نئے انداز سے پیش کیا جا رہا ہے"۔

مشاری الذایدی کا پروگرام "مرایا" اتوار سے جمعرات تک ہفتے میں پانچ روز العربیہ نیوز چینل کی اسکرین پر سعودی عرب کے وقت کے مطابق شام 6:45 پر نشر ہوتا ہے۔