"اہواز حملے کے جواب میں" ایران نے شام پر میزائل داغ ڈالے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایرانی میڈیا نے پیر کے روز بتایا ہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب نے "اہواز کے حملے کے جواب میں" شام کی سمت بیلسٹک میزائل داغے ہیں۔

ایرانی سرکاری خبرساں ایجنسیوں نے جن میں ایرانی ٹی وی اور اِرنا ایجنسی بھی شامل ہے یہ خبر دی ہے کہ ایران نے شام میں فرات کے مشرقی جانب "دہشت گرد" جماعتوں پر بیلسٹک میزائل داغے۔

پاسداران انقلاب کی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق "اہواز کے دہشت گردانہ جرم کے ذمّے دار عناصر کو پاسداران اسلامی انقلاب کی ایرو اسپیس فورس نے فرات کے مشرق میں بیلسٹک میزائلوں کا نشانہ بنایا ہے"۔

یہ پیش رفت ایرانی پارلیمنٹ کے ایک نمایاں رکن کے اُس بیان کے دو روز بعد سامنے آئی ہے جس میں انہوں نے کہا کہ اہواز شہر کی فوجی پریڈ پر حملہ سکیورٹی فورسز کی غفلت کا نتیجہ تھا۔ قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی سے متعلق پارلیمانی کمیٹی کے سربراہ حشمت اللہ فلاحت پیشہ کے مطابق وزارت انٹیلی جنس اور فوج کی جانب سے جاری وڈیو ریکارڈنگ اس بات کو واضح کرتی ہے۔ فلاحت پیشہ کے مطابق جائے وقوع پر آٹھ یا نو نشانچی موجود تھے جو 30 سیکنڈوں میں بآسانی دہشت گردوں کو ہلاک کر سکتے تھے۔

اہواز میں ہونے والی سالانہ فوجی پریڈ میں ایرانی فوج کی وردی میں ملبوس مسلح افراد نے اچانک اندھادھند فائرنگ کر دی تھی۔ گزشتہ دس برسوں کے دوران ملک کے خون ریز ترین حملے کے نتیجے میں 24 افراد ہلاک اور 60 زخمی ہو گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں