امریکی پابندیوں کے نتیجے میں ایران کا سب سےبڑا چھاپہ خانہ دیوالیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا کی طرف سےایران پر عاید کردہ اقتصادی پابندیوں کےنتیجے میں تمام شعبہ ہائے زندگی متاثر ہو رہے ہیں۔ دیگر شعبوں کی طرح تہران کے چھاپہ خانے اور پریس کے مراکز بھی شدید مالی بحرانوں کا سامنا کرنے لگے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق 30 سال سےتہران میں قائم 'بامشاد سبز' پرنٹنگ پریس بھی امریکی پابندیوں کےنتیجے میں دیوالیہ ہوگیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق غیرملکی کرنسی کی عدم دستیابی، کاغذ کی قلت اور دیگر ضروری سامان کی عدم فراہمی کی وجہ سے پرنٹنگ پریس نے اپنے سرگرمیاں محدود کردی ہیں۔

ایرانی اخبار 'بہار نیوز' کی رپورٹ کے مطابق 'بامشاد سبز پرینٹگ پریس' ایران کے سب سے بڑے اور پرانے چھاپہ خانوں میں‌ہوتا ہے۔ یہ پریس ایران میں سرکاری اسکولوں کو نصاب ، اخبارات اور دیگر بڑے پیمانے پر کتب چھاپتا رہا ہے۔

اخباری رپورٹس کے مطابق'بامشاد سبز' پرنٹنگ پریس نے جن اخبارات اور دیگر اداروں کے ساتھ پرنٹنگ کے معاہدے کر رکھے ہیں انہیں ادارے کو درپیش مالی بحران کے بارے میں آگاہ کر دیا گیا ہے۔ پرنٹنگ پریس کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ادارہ مالی مشکلات سے دوچار ہے۔ اس کے پاس پرنٹنگ کے لیے درکار کاغذ موجود نہیں، اس لیے پریس مزید طباعت اور اشاعت کا کام نہیں کرسکے گا۔

ایرانی اخبارات کے ذرائع کے مطابق 'بامشاد سبز' کی طرف سے پرنٹنگ پر معذرت کےبعد اخبارات متبادل چھاپہ خانوں کی تلاش میں ہیں۔ اخباری اطلاعات کے مطابق چھاپہ خانوں میں‌کاغذ کی قلت کے باعث بعض اخبارات کے صفحات بھی کم کئے گئے ہیں مگر انہیں اس کا بھی کوئی فائدہ نہیں ہوا ہے۔

ستمبر میں ایرانی اخبار 'قانون' نے ایران میں کاغذ کی قیمت میں بے پناہ اضافے پر ایک رپورٹ شائع کی تھی جس میں‌کہا گیا تھا کہ ملک بھر میں پرنٹنگ اور پریس کے شعبے کو ایک نئے اورسنگین بحران کا سامنا ہے۔ اخبار کےمطابق اگر یہ بحران حل نہیں ہوتا تو ایران میں چھاپہ خانوں کا مستقبل تاریک ہوجائے گا اور اخبارات چھپنا بھی بند ہوجائیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں