حوثیوں کی جعلی عدالتوں سے حکومت کے حامیوں پھانسی کی سزائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

یمن کے ایرانی حمایت یافتہ حوثی باغیوں کی طرف سے قائم کردہ نام نہاد عدالتوں سے حکومت کے حامی کارکنوں کو سزائے موت اور دیگر سنگین نوعیت کی سزائیں دینے کا سلسلہ جاری ہے۔

گذشتہ روز صنعاء میں قائم حوثیوں کی ایک نام نہاد فوج داری عدالت نے دو یمنی شہریوں‌ کو سرکاری فوج کے لیے جاسوسی کے الزام میں سزائے موت کا حکم دیا ہے۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کےمطابق حوثیوں کی فرضی عدالت سے زیرحراست شہری یحییٰ ھانی محمد ثابت العریقی اور علی عبدالالہ علی الحاشدی کو یمن کی سرکاری فوج کے ساتھ تعاون کرنے اور انہیں کے لیے مخبری کرنے کے الزام میں سزائے موت سنائی گئی۔

اس سے قبل حوثیوں کی ایک فرضی فوجی عدالت تین شہریوں کو ایک دوسرے ملک کے لیے مخبری کے الزام میں سزائے موت سنائی تھی۔

سزائے موت پانے والے جمال عبداللہ ناصر، علی صالح عبدالرب احمد العبیدی اور مراد حسین صالح العبیدی پر سرکاری فوج کے ساتھ تعاون کرنے اور لوگوں کو حوثیوں باغیوں کے خلاف اکسانے سمیت کئی دوسرے الزامات بھی عاید کیے گئے تھے۔2016ء کو ایک سماجی کارکن حمزہ الجیحی کو بھی سزائے موت سنائی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں