.

یہودی آباد کاروں نے پتھر مار کر فلسطینی خاتون قتل کر ڈالی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے میں غاصب یہودیوں نے ایک فلسطینی خاتون کو پتھر مار کر شہید اور اس کے شوہر کو زخمی کر دیا۔

فلسطینی خبر رساں ایجنسی "وفا" کے مطابق ہفتے کو علی الصباح یہودی آباد کاروں‌نے 45 سالہ عایشہ محمد طلال رابی کو نابلس کے جنوب میں زعترہ چیک پوسٹ کے قریب گاڑی پر سنگ باری کی جس کے نتیجے میں کارمیں سوار دونوں میاں بیوی زخمی ہوگئے۔ یہودی آبادکاروں نے آگے بڑھ کر کار میں زخمی حالت میں پڑی خاتون کے سرپر پتھر مار کر اسے شہید کر دیا۔

فلسطینی ہلال احمر کے مطابق ہفتے کو یہودی آباد کاروں نے رابی کے پر پتھر مارکراسے شدید زخمی کیا۔ سنگ باری کے نتیجے میں اس کے شوہر بھی زخمی ہوئے۔ بعد ازاں اسپتال لے جاتے ہوئے زخمی خاتون زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گئی۔

مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ زخمی خاتون اور اس کے شوہر کو ابن سینا اسپتال کے شعبہ حادثات میں منتقل کیا گیا مگر وہ اس وقت تک دم توڑ چکی تھی۔

عائشہ رابی 8 بچوں کی ماں تھیں اور ان کے سب سے چھوٹے بچے کی عمر تین سال ہے۔ یہودی آباد کاروں کی طرف سے خاتون کو وحشیانہ طریقے سے قتل کرنے پر مقبوضہ غرب اردن میں عوام میں سخت غم وغصے کی لہر پائی جا رہی ہے۔ گذشتہ روز سیکڑوں افراد نے مقتولہ کی جنازے میں شرکت کی۔ انہوں نے لاش کندھوں پر اٹھا کریہودی غنڈہ گردی اور اسرائیلی ریاستی دہشت گردی کے خلاف نعرے بازی کی۔