.

عالمی معیشت میں سعودی عرب کو کتنا کنٹرول حاصل ہے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب روزانہ 1.07 کروڑ بیرل خام تیل پیدا کرتا ہے۔ مملکت کے پاس روزانہ 13 لاکھ اضافی بیرل پیدا کرنے کی بھی گنجائش ہے جس کا استعمال وہ جب چاہے کر سکتی ہے۔ اس طرح خام تیل کی عالمی پیداوار میں سعودی عرب کا حصّہ تقریبا 12% ہے۔

اگر سعودی عرب نے اس کارڈ کو استعمال کرنے کا فیصلہ کر لیا تو کیا ہو گا ؟

ایران جو روزانہ 37 لاکھ بیرل خام تیل پیدا کرتا ہے ، اس نے تیل کی قیمت 86 ڈالر فی بیرل تک پہنچا دی۔ لہذا اگر بات سعودی عرب کی پیداوار پر پہنچی تو عالمی منڈی میں تیل کی قیمت تین گُنا بڑھ جانا کوئی حیرت کی بات نہیں ہو گی۔

علاقائی معیشت میں سعودی عرب کا کردار سادہ سا نہیں ہے۔ سال 2016ء میں سعودی عرب کی معیشت کی نُمو میں کمی آئی جس کا عکس پورے خطّے پر پڑا۔ اس نے عالمی کمپنیوں کے فیصلے پر بھی اثر ڈالا کہ آیا وہ خطّے میں رہیں یا کوچ کر جائیں۔ سعودی عرب کی منڈی 685 ارب ڈالر کی معیشت کے ساتھ گزشتہ برس سب بڑی رہی۔

سعودی عرب نے خطّے میں دیگر ممالک کی معیشت کو سہارا دینے کی کوششوں کی بھی قیادت کی۔ ان میں رواں سال بحرین اور اردن جب کہ گزشتہ برس مصر شامل ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سعودی عرب کے دورے کے دوران 270 ارب ڈالر کے معاہدوں پر دستخط ہوئے۔ ان میں بڑا حصّہ ہتھیاروں سے متعلق سمجھوتوں کا ہے۔ ٹرمپ کے مطابق ان کی مالیت 110 ارب ڈالر کے قریب ہے۔

امریکی کمپنیوں میں سعودی سرمایہ کاری کا دائرہ نمایاں حد تک وسیع ہوا ہے۔ یہاں تک کہ بعض اہم امریکی کمپنیوں میں مملکت سب سے بڑی حصّے دار بن گئی ہے۔ یورپ ، روس اور چین میں سرمایہ کاری اس کے علاوہ ہے۔ مختصر یہ کہ سعودی عرب کی معیشت کا اثر مملکت تک محدود نہیں رہتا اور اس کو پہنچنے والے کسی بھی ضرر کے نتائج علاقائی اور عالمی سطح پر مرتب ہوں گے۔