.

مصر : معزول صدر ڈاکٹر محمد مرسی کو سنائی گئی تین سال قید کی سزا برقرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی ایک اعلیٰ اپیل عدالت نے معزول صدر ڈاکٹر محمد مرسی کو توہین ِ عدلیہ کے جرم میں سنائی گئی تین سال قید کی سزا برقرار رکھی ہے۔

اپیل عدالت نے ڈاکٹر محمد مرسی کے علاوہ انیس افراد کو سنائی گئی قید اور جرمانے کی سزاؤں کو بھی برقرار رکھا ہے۔ معزول صدر کو اس کیس میں دس لاکھ مصری پاؤنڈ جرمانہ ادا کرنے کا بھی حکم سنایا گیا تھا۔

ان پر ملک کے صدر کی حیثیت سے ایک تقریر میں ایک حاضر سروس جج کی توہین کے الزام میں یہ مقدمہ چلایا گیا تھا۔وہ مختلف کیسوں میں ماخوذ ہونے کے الزام میں پہلے ہی جیل میں بند ہیں ۔

کالعدم الاخوان المسلمون سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر محمد مرسی مصر کے جمہوری طور پر منتخب شدہ پہلے صدر تھے لیکن انھیں جنرل عبدالفتاح السیسی کے زیر قیادت فوج نے اقتدار کے صرف ایک سال کے بعد ہی جولائی 2013ء میں برطرف کردیا تھا اور انھیں گرفتار کرکے پابندِ سلاسل کردیا گیا تھا۔ان کے خلاف تب سے مختلف الزامات کی پاداش میں مقدمات چلائے جارہے ہیں۔

عدلیہ اور ججوں کی توہین کے الزام میں دائر اس مقدمے میں جن دوسرے افراد کو سزائیں سنائی گئی تھیں،ان میں زیادہ تر انتہا پسند ہیں ۔البتہ ان میں بعض سیکولر کارکنان بھی شامل ہیں۔ایک معروف سیکولر کارکن علاء عبدالفتاح کو عدالت نے صرف 30 ہزار مصری پاؤنڈ جرمانہ عاید کیا ہے لیکن وہ دوسرے الزامات پر بدستور جیل ہی میں رہیں گے۔