امریکی محکمہ خزانہ نے ایران کے خلاف نئی پابندیاں عاید کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکا کے محکمہ خزانہ نے ایران کے خلاف نئی پابندیاں عاید کردی ہیں۔محکمہ خزانہ نے ایران کی ایک ٹریکٹر ساز کمپنی اور ایک اسٹیل کمپنی سمیت مختلف فرموں پر نئی قدغنیں عاید کی ہیں۔

ان کے علاوہ ایران کے اربوں ڈالر مالیت کے حامل ایک مالیاتی نیٹ ورک پر بھی پابندیاں عاید کی گئی ہیں۔اس پر ملک کی طاقتور سپاہِ پاسداران انقلاب کے لیے بچّہ فوجیوں کو بھرتی کرنے اور انھیں عسکری تربیت دینے والی ایک پیراملٹری فورس کی حمایت کا الزام ہے۔

امریکی محکمہ خزانہ نے منگل کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’بنیاد تعاون بسیج نیٹ ورک ‘‘ایک رضاکار پیرا ملٹری گروپ بسیج ملٹری فورس کا معاون اور مددگار ہے اور یہ فورس سپاہِ پاسداران انقلاب سے مل کر کام کرتی ہے۔

سیکریٹری خزانہ اسٹیون نوچین کا کہنا ہے کہ ’’ یہ وسیع نیٹ ورک بسیج ملیشیا کی بچّہ فوجیوں کو بھرتی کرنے ، انھیں تربیت دینے اور پاسداران انقلاب کی ہدایت کے مطابق کام کرنے کے قابل بنانے کے لیے رقوم مہیا کرتا رہا ہے‘‘۔

ایران کے ملت بنک پر بھی نئی قدغنیں عاید کی گئی ہیں۔اس بنک پر بسیج ملیشیا کے مہر اقتصاد بنک کی مدد وحمایت کا الزام ہے۔مہر اقتصاد کی ملکیتی یا اس کے کنٹرول میں فرموں پر بھی قدغنیں عاید کردی گئی ہیں۔

امریکی انتظامیہ کے ایک سینیر عہدے دار کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ کے طے شدہ جوہری معاہدے کو خیرباد کہنے کے فیصلے اور ایران کے خلاف نئی پابندیوں کے نفاذ کے بعد سے ایران کی تیل کی برآمدات میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں